پی آئی سی حملے میں ملوث وکلاء کے خلاف دہشت گردی ایکٹ کےتحت کارروائی کی جائے:صدر پی یو جے قمر زمان بھٹی

پی آئی سی حملے میں ملوث وکلاء کے خلاف دہشت گردی ایکٹ کےتحت کارروائی کی ...
پی آئی سی حملے میں ملوث وکلاء کے خلاف دہشت گردی ایکٹ کےتحت کارروائی کی جائے:صدر پی یو جے قمر زمان بھٹی

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آْن لائن) پنجاب یونین آف جرنلسٹ نے وکلاء کی طرف پی آئی سی حملے اورصحافیوں پر تشدد کو دہشت گردی کی بدترین مثال قراردیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے اور حکومت سےمطالبہ کیا ہے کہ واقعہ میں ملوث وکلاء کے خلاف دہشت گردی ایکٹ کےتحت کارروائی کی جائے ہے۔

پی یو جے کے صدر قمرالزمان بھٹی،سینئر نائب صدر خرم پاشا،نائب صدر یوسف عباسی،سینئر جوائنٹ سیکرٹری عطیہ زیدی، جوائنٹ سیکرٹری نصراللہ ملک، خزانچی بدر ظہور چشتی اور ایگزیکٹو کونسل نے اپنے مذمتی بیان میں کہا ہے کہ وکلاء کی طرف سے دل کےہسپتال میں ہونے والے حملے سے انسانیت کا سر شرم سے جھک گیا ہے،اس سے پوری دنیا میں پاکستان کی بدنامی ہوئی ہے۔ پی یو جے کے صدر قمرالزمان بھٹی کا کہنا تھا کہپی آئی سی پر وکلاء حملے نے دہشت گردی کی بدترین مثال قائم کر دی ہے،جنگوں میں بھی دشمن ہسپتالوں پرحملہ نہیں کرتے اور نہ ہی دہشتگردوں نےکبھی ہسپتالوں کو ٹارگٹ کیاہے،وکلاء کی سینئر قیادت اوربارکونسل کواس صورتحال کا نوٹس لینا چاہیے۔اُنہوں نےشر پسند وکلاء کے لائنس منسوخ کرنےکا مطالبہ کرتے  ہوئے کہا کہ جیو نیوز کے رپورٹر احمد فراز، اے آر وائی کے رپورٹر حسن حفیظ ،ایکسپریس نیوز کے رپورٹر ندیم چودھری،سٹی 42 کے رپورٹر علی ساہی،کیمرہ مین علی عدنان،آپ نیوز کی رپورٹر امبر قریشی،آج نیوز کے سینئر رپورٹر سلیم شیخ ،ہم نیوز کے رپورٹر حسنین چودھری،برہان الدین اور کیمرہ مین رمضان ملک سمیت دیگر صحافیوں پرتشدد کرنے والے وکلاء کے خلاف دہشت گردی ایکٹ کے تحت کارروائی کی جائے اور کیمروں سمیت دیگر قیمتی اشیا کے نقصان کو پورا کیا جائے۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور