منی بجٹ میں کھانے پینے کی اشیا پر ٹیکس چھوٹ ختم نہیں ہوگی: شوکت ترین 

منی بجٹ میں کھانے پینے کی اشیا پر ٹیکس چھوٹ ختم نہیں ہوگی: شوکت ترین 

  

 اسلام آباد(سٹاف رپورٹر)   مشیر خزانہ شوکت ترین نے کہا  ہے کہ آئندہ ہفتوں میں پاکستان میں پیٹرول کی قیمتوں میں بھی کمی  کی جائے گی،منی بجٹ میں کھانے پینے کی اشیا پر دی جانے والی ٹیکس چھوٹ ختم نہیں ہوگی،غیر ملکی اردو ویب سائٹ کو انٹرویو میں شوکت ترین نے کہا کہ حکومت آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے کے تحت منی بجٹ اگلے ہفتے لا رہی ہے لیکن اس میں کھانے پینے کی اشیا پر دی جانے والی ٹیکس چھوٹ ختم نہیں ہوگی، اس لئے منی بجٹ سے اشیائے خور ونوش مہنگی نہیں ہوں گی۔ شوکت ترین نے کہا کہ منی بجٹ میں میک اپ کا سامان، کپڑے، جوتے اور پرفیومز سمیت دیگر درآمدی آسائشی سامان پر کسٹم ڈیوٹی بڑھائی جائے گی، اس کے علاوہ مقامی طور پر تیار ہونے والی کچھ اشیا پر بھی سیلز ٹیکس کی شرح 12 سے بڑھا کر 17 فی صد کی جائے گی۔مشیر خزانہ نے کہا کہ عالمی منڈی میں قیمتیں نیچے آنے کے بعد اب تک پیٹرول کی قیمتیں کم نہیں ہوئی تھیں تاہم آئندہ ہفتوں میں پاکستان میں پیٹرول کی قیمتوں میں  بھی کمی  کی جائے گی۔

مشیر خزانہ

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر)  مشیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ گلگت بلتستان  کی ترقی موجود ہ حکومت کی اولین ترجیح ہے، جی بی میں گندم کی فراہمی یقینی بنانے کے لئے  مسئلہ ای سی سی اجلاس میں میں اٹھا یاجائے گا،دسمبر کے آخر تک گلگت بلتستان کیلئے  اضافی گرانٹ پر پیشرفت شروع کردی جائے گی۔جمعہ کو   مشیر خزانہ شوکت ترین  سے وزیراعلی گلگت بلتستان  خالد خورشید  نے اسلام آباد میں ملاقات کی۔ ملاقات میں صوبائی وزیر خزانہ گلگت بلتستان جاوید منوآ اور صوبائی  مشیر خوراک شمس الحق لون  سمیت  جی بی کابینہ  کے دیگر اراکین بھی موجود تھے۔اس موقع پر مشیر خزانہ نے کہا کہ گلگت بلتستان سمیت تمام صوبوں کی ترقی موجود ہ حکومت کی اولین ترجیح ہے اور جی بی کی ترقی کیلئے ہر ممکن تعاون کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کو مالی طور پر مستحکم بنانے کے حوالے سے بھرپور مدد فراہم کرینگے،وفاقی فنانس ڈویژن جی بی حکومت کی ترجیحات پر صحت، تعلیم،  رییونیو مینجمنٹ میں آسامیاں تخلیق کرے گا۔مشیر خزانہ نے  کہا کہ گلگت بلتستان  کے لئے  گندم کی فراہمی یقینی بنانے کے لئے  وفاقی وزارت خزانہ ہنگامی بنیادوں پر مسئلہ ای سی سی اجلاس میں میں اٹھائے گا اور مقامی  گندم کی فراہمی کو یقینی بنایا جائیگا  جبکہ  دسمبر کے آخر تک اضافی گرانٹ پر پیشرفت شروع  کردی جائے گی۔ملاقات میں وزیراعلیٰ گلگت بلتستان نے ترقیاتی منصوبوں کیلئے فنڈز کے بروقت اجرا اور نئے پروگرامات کے حوالے سے گفتگو کی  اور وزارت خزانہ کے تعاون پر اطمینان کا اظہار کیا۔(م ا)

مشیر خزانہ

مزید :

صفحہ اول -