اچھے ایگزیکٹو افسران کے بغیر گڈگورننس  کا قیام ناممکن،چیف جسٹس پاکستان

       اچھے ایگزیکٹو افسران کے بغیر گڈگورننس  کا قیام ناممکن،چیف جسٹس ...

  

 اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) چیف جسٹس پاکستان گلزار احمد نے کہا ہے بیوروکریسی کی فیصلہ سازی میں تاخیر سے عدالتی بوجھ میں اضافہ ہوتا ہے،بیوروکریسی کی کام کرنے میں ہچکچا ہٹ سے عوام کی پریشانیوں میں اضافہ ہوتا ہے، بیوروکریسی اپنی زمہ داریاں ایمانداری، شفافیت اور قانون کے مطابق ادا کرے۔ عدالت عظمی سے جاری تفصیلات کے مطابق یہ بات چیف جسٹس گلزار احمد نے جمعہ کو یہاں سپریم کورٹ میں نیشنل مینجمنٹ کورس کے وفد سے ملاقات میں کہی۔ 115 ویں نیشنل مینجمنٹ کورس کے وفد نے ریکٹر نیشنل سکول آف پبلک پالیسی ڈاکٹر اعجاز منیر کی سربراہی میں چیف جسٹس گلزار احمد سے ملاقات کی۔ چیف جسٹس نے وفد کو خوش آمدید کہااور دوران ملاقات وفد سے گفتگو کرتے ہوئے چیف جسٹس گلزار احمد نے مزید کہا بیوروکریسی کا کام پالیسیز پر عمل کرتے ہوئے عوامی شکایات کا ازالہ کرنا ہے، بیوروکریسی عدالتوں سے ملنے والی رہنمائی حاصل کرے تاکہ فراہمی انصاف ممکن ہو، بنیادی حقوق کی فراہمی سے ہی عوام اور بیوروکریسی میں فاصلہ کم ہوگا۔ چیف جسٹس گلزار احمد نے کہا اچھے ایگزیکٹو افسران کے بغیر گڈگورننس کا قیام ناممکن ہے۔ وفد نے ملاقات کیلئے وقت دینے پر چیف جسٹس آف پاکستان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے انہیں سوینئر بھی پیش کیا۔

چیف جسٹس 

مزید :

صفحہ اول -