کیجریوال کے پاس سرکاری فلیٹ کا کرایہ نہیں تھا وہ دہلی کے ”مالک“ بن گئے

کیجریوال کے پاس سرکاری فلیٹ کا کرایہ نہیں تھا وہ دہلی کے ”مالک“ بن گئے
کیجریوال کے پاس سرکاری فلیٹ کا کرایہ نہیں تھا وہ دہلی کے ”مالک“ بن گئے

  

لاہور (ویب ڈیسک) 28 مئی 2014ءکو جس کیجریوال کے پاس سرکاری فلیٹ کا کرایہ ادا کرنے کیلئے پیسے نہیں تھے وہ 70 میں سے 67 نشستیں حاصل کرکے بھارتی دارالحکومت نئی دہلی کا مالک بن گیا ہے۔ کیجریوال نے جب 14 فروری 2014ءکو وزیراعلیٰ دہلی کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا تو ان کا اپنا کوئی مکان نمبر نہیں تھا، تاہم وزیراعلیٰ کی حیثیت سے انہیں یہ فلیٹ استعفیٰ کے بعد 15 روز کے اندر خالی کرنا تھا جس پر اروند کیجریوال بے حد پریشان ہوگئے تھے۔ انہوں نے دہلی کے گورنر سے درخواست کی تھی کہ ان کی بیٹی کے امتحانات مئی 2014ءمیں ختم ہوں گے اس کے بعد وہ فلیٹ خالی کردیں گے۔ مئی میں انہوں نے پھر درخواست دی کہ وہ اگست تک اسی فلیٹ میں رہنا چاہتے ہیں لیکن 28 مئی کو انہیں گورنر کی منظوری کے بعد بی ڈبلیو ڈی کی طرف سے نہ صرف فلیٹ خالی کرنے کا اچانک نوٹس دیا گیا بلکہ انہیں یکم مارچ 2014ءسے 85 ہزار روپے ماہانہ کے حساب سے کرایہ بھی ادا کرنے کا حکم دیا گیا تاہم اروند کیجریوال کے پاس کرایہ ادا کرنے کیلئے ایک روپیہ بھی نہیں تھا لیکن ان کے دوستوں نے فوری طور پر کرایہ کی رقم ادا کردی۔ اروند کیجریوال کے خیر خواہوں نے ان کے لئے سول لائنز کے علاقے میں ایک پرانا بنگلہ کرایہ پر لے کر دیا کیجریوال سے صرف ایک روپیہ کرایہ طے ہوا۔

مزید : بین الاقوامی