کالی آندھی کو ذرا ترس نہ آیا، بنگالی حسیناؤں کا رو رو کر براحال

کالی آندھی کو ذرا ترس نہ آیا، بنگالی حسیناؤں کا رو رو کر براحال
کالی آندھی کو ذرا ترس نہ آیا، بنگالی حسیناؤں کا رو رو کر براحال

  

میرپور(مانیٹرنگ ڈیسک) خواتین کا بات بے بات  رونا کسی اچنبھے کی بات نہیں ہے لیکن بنگالی حسینائیں اس وقت اس کام میں سب پر بازی لے گئیں جب سیمی فائنل میں ویسٹ انڈیز نے بنگالی ٹائیگرز کی دھلائی کردی۔

تفصیلات کے مطابق بنگلہ دیش کے شہر میرپور کے شیر بنگلہ سٹیڈیم میں ویسٹ انڈیز اور بنگلہ دیش کے درمیان انڈر 19 ورلڈ کپ کا پہلا سیمی فائنل کھیلا گیا جس میں بنگال ٹائیگرز نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے بنگلہ دیش کو 226 رنز کا ہدف دیا جو ویسٹ انڈیز نے 7 وکٹوں کے نقصان پرایک اوور پہلے ہی حاصل کرلیا۔

ویسٹ انڈیزکی یہ فتح بنگالی حسیناؤں کے نرم ونازک دلوں پر بہت ہی گراں گزری اور سٹیڈیم میں بیٹھی لڑکیوں نے اپنی ٹیم کے ہارنے پر رونا شروع کردیا۔ جتنا بنگلہ دیش کی لڑکیاں اپنی ٹیم کے ہارنے پر روتی ہیں اس سے تو 2 ہی باتیں ظاہر ہوتی ہیں۔ ایک تو یہ کہ بنگالی خواتین کو اپنے ملک سے بہت پیار ہے یا دوسری بات یہ ہوسکتی ہے کہ دوسری ٹیمیں کھیلنا ہی چھوڑدیں تاکہ نازک دلوں پر ہار کا بوجھ نہ پڑ سکے۔

واضح رہے کہ ایشیا کپ کے دوران شاہد آفریدی نے جب بنگالی بولروں کی درگت بنائی اور پاکستان کو فتح دلائی تو اس وقت بھی بنگلہ دیش کی مداح لڑکیوں نے رو رو کر اپنے ملک کیلئے خوب محبت کا اظہار کیا تھا۔

مزید : کھیل