انصاف کی راہ میں رکاوٹ بننے والے افسران رسوا ہونگے‘ سلطان اعظم تیموری

انصاف کی راہ میں رکاوٹ بننے والے افسران رسوا ہونگے‘ سلطان اعظم تیموری

ملتان ( وقائع نگار )ریجنل پولیس آفیسر سلطان اعظم تیموری نے اردل روم کا انعقاد کیا ۔ جہاں انہوں نے پولیس افسران وملازمان کو دی گئی سزاؤں کے خلاف اپیلوں کی سماعت کی۔ اس(بقیہ نمبر23صفحہ12پر )

موقع پر انہوں نے کہا کہ پولیس کا کام عوام کو انصاف فراہم کرنا ہے۔ جو افسران انصاف کی راہ میں رکاوٹ بنتے ہیں ان کو اس جہاں میں اور اگلے جہاں بھی رسوائی کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اس لئے ضروری ہے کہ آپ (بقیہ نمبر42صفحہ12پر )

لوگوں کو میرٹ پر انصاف فراہم کر یں ۔ تاکہ لوگ آپ سے خوش ہوں ۔ انسپکٹر شاہد نذیر خانیوال کو عدالت عالیہ کے احکامات کی تعمیل نہ کرنے پر اس کو دو سال سروس ضبطی کی سزا دی۔ ایس ایس پی آر آئی بی نے بھی مذکورہ کو قصور وار قرار دیاتھا۔ معطل انسپکٹر ظہیر بابر بطور ایس ایچ او کینٹ ملتان تعینات تھا۔ مذکورہ انسپکٹر نے اپنے اختیارات سے تجاوز کیا اور قانون کی متوازن سطح پر عمل درآمد کرنے میں ناکام رہا۔ اس معاملہ کی انکوائری ایس ایس پی آر آئی بی نے کی۔ انکوائری میں انسپکٹر کو بے گناہ تحریر کیا گیا۔ جس بناء پر اس کو بحال کر کے آئندہ محتاط رہنے کی وارننگ دی۔ برطرف سب انسپکٹر ظفر اقبال لودھراں تھانہ جلہ آرائیں تعیناتی کے دوران ڈکیتی میں ملوث ملزم محمد بابر کو ناجائز اسلحہ کی برآمدگی کیلئے لیکر جا رہے تھے کہ راستے میں 03کس ملزمان نے ملزم بابر کو انداھا دھند فائرنگ کر کے زخمی کر دیا۔ ریڈنگ پارٹی کی غفلت اورلاپرواہی کے نتیجے میں ملزم محمد بابر شدید زخمی ہوا جو کہ جسمانی ریمانڈ پر تھا۔ ڈی ایس پی ہیڈ کوارٹر لودھراں نے سب انسپکٹر مظفر اقبال کو قصور وار قرار دیا تھا۔ جس بناء پر اس کی اپیل مسترد کر دی گئی۔ سب انسپکٹر تصور حسین تنزلی عہدہ سب انسپکٹر سے اسسٹنٹ سب انسپکٹر ملتان نے تھانہ حرم گیٹ تعیناتی کے دوران مقدمہ نمبر 69/16بجرم 382ت پ کی تفتیش طمع نفسانی کی خاطر غلط خطوط پر کی تھی جبکہ اس معاملہ کی ریگولرانکوائری نہیں کی گئی۔ جس بناء پر ریجنل پولیس آفیسرنے اس کو اس کے اصل عہدے سب انسپکٹرپر بحال کر کے ریگولر انکوائری کا حکم دیا۔برخواست شدہ اسسٹنٹ سب انسپکٹر طاہر ندیم بطور محر ر تھانہ سٹی لودھراں تعینات تھا۔ اس دوران اس نے ایک پرائیویٹ شخص سے شناختی کارڈ کی گمشدگی کی رپٹ کیلئے 500/-روپے کا تقاضہ کیا ۔ انکوائری میں بھی الزام درست ثابت ہونے پر اس کی برخواستگی کی اپیل کو مسترد کر دیا۔ ہیڈ کانسٹیبل محمد معاویہ وہاڑی بطور محرر تھانہ صدر وہاڑی تعینات تھا۔ اس دوران اس نے ایک جھوٹے مقدمہ نمبر 770/14بجرم 380ت پ ایس ایچ اوکے نوٹس میں لائے بغیر درج کر دیا۔ انکوائری میں الزام ثابت ہونے پر اس کی دوسال سروس ضبطی اپیل کو مسترد کر دیا۔برخواست شدہ کنسٹیبل محمد حنیف لودھراں پولیس لائن میں اپنی ڈیوٹی سے مسلسل غیر حاضر تھا۔ ریجنل پولیس آفیسر نے اس کا عرصہ غیر حاضری بلاتنخواہ میں تبدیل کر کے اس کو نوکری پر بحال کر دیا۔برخواست شدہ کنسٹیبل عاشق حسین کا تبادلہ سی آئی اے سٹاف گگو سے پولیس لائن وہاڑی کیا گیاتھا۔ مذکورہ نے اپنی نئی جائے تعیناتی پر رپورٹ نہ کی اور اپنی ڈیوٹی سے غیر حاضر ہو گیا۔ لیکن اس معاملہ کی ریگولر انکوائری نہیں کی گئی۔ جس بناء پر اس کو عارضی بحال کر کے اس کی ریگولر انکوائری کرنے کا حکم دیا۔ برخواست شدہ ڈرئیور کانسٹیبل ذوالفقار علی وہاڑی کا تبادلہ تھانہ ماڈل ٹاؤن بورے والا سے پولیس لائن کیا گیا تھا۔ لیکن مذکورہ نے بھی اپنی جائے تعیناتی پر حاضری نہ دی اور جان بوجھ کر غیر حاضر ہوگیا۔ انکوائری میں مذکورہ کنسٹیبل کو قصور وارتحریر دیا گیا تھا۔ جس بناء پر اس کی اپیل کو مسترد کر دیا گیا۔

آر پی او

مزید : ملتان صفحہ آخر