ملکی تعلیمی نظام مکمل طور پر تضادات کا شکار ہے،ضیاء الدین انصاری

ملکی تعلیمی نظام مکمل طور پر تضادات کا شکار ہے،ضیاء الدین انصاری

لاہور(وقائع نگار )قائمقام امیر جماعت اسلامی لاہور ضیاء الدین انصاری نے کہا ہے کہ ملکی تعلیمی نظام مکمل طور پر تضادات کا شکار ہو چکا ہے اور نجی تعلیمی اداروں کا معاملہ ساہوکاری اور بنیا گیری بن چکا ہے ،پاکستان ان چند ملکوں میں سے ایک ہے جہاں عوام اورخواص کے تعلیمی ادارے بالکل علیحدہ علیحدہ ہیں ۔ان خیالات کا اظہار گذشتہ روز انہوں نے اپنے بیان میں کیا۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان میں صرف تعلیم کا شعبہ ہی نہیں بلکہ ہر شعبے میں یہی مسئلہ ہے جو بے لگام منافع خوری کی طرف مائل ہے۔انہوں نے کہا کہ دنیا کے اکثر ممالک میں ریاست تعلیم کے شعبے کو اپنے ہاتھ میں رکھتی ہے یا اسے غیر منافع بخش تنظیموں کے تحت چلانے پرزور دیتی ہے مگر ہمارا ملک وڈیروں ، نوسربازوں ، کرپٹ حکمرانوں کے ہاتھوں میں گروی رکھ دیا گیا ہے ۔ ان میں سے اکثریت کے بچے بیرونی ممالک یا ملک کے اول کلاس کے تعلیمی اداروں میں زیر تعلیم ہیں ۔انہوں نے کہاکہ ملک میں غربت اور مہنگائی نے عام آدمی کی زندگی کو اس قدر متاثر کیا ہے کہ و ہ اس دور میں اپنے بچوں کو پڑھانا تو دور کی بات دو وقت کی روٹی ان کے لیے مشکل سے کما پارہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ملک اس وقت تک ترقی نہیں کر سکتا جب تک اس کے افراد پڑھے لکھے اور با شعو نہ ہوں ۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ سرکاری سطح پر دوسرے ترقی یافتہ ممالک کی طرح

مزید : میٹروپولیٹن 1