معیاری تعلیم کا تعلق اچھے اور قابل اساتذہ سے منسلک ہے،جام مہتاب

معیاری تعلیم کا تعلق اچھے اور قابل اساتذہ سے منسلک ہے،جام مہتاب

کراچی(اسٹاف رپورٹر) صوبائی وزیر تعلیم و خواندگی جام مہتاب حسین ڈھر نے کہاکہ معیاری تعلیم کا تعلق اچھے اور قابل اساتذہ سے جڑا ہوا ہے اور جب تک ھمارے ٹیچرز تربیتی اداروں کا معیار بلند نہیں ہوگا اس وقت تک ہمیں اعلی معیار کے اساتذہ نہیں ملیں گے۔یہ بات انہوں نے جمعہ کو تغلق ہاؤ س میں ٹیچرز ٹریننگ انسٹیٹیوٹ انڈر پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے تحت ہونے ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ اجلاس میں سیکریٹری تعلیم ا سکولز جمال مصطفی سید، ڈائریکٹر آئی بی اے سکھر ڈاکٹر نثار احمد صدیقی ' ڈائریکٹر آئی بی اے کراچی ڈاکٹر سعید احمد غنی اور اقراء یونیورسٹی ' آغا خان یونیورسٹی ' زیبسٹ یونیورسٹی کے نمائندوں اور دیگر افسران نے بھی شرکت کی۔ اجلاس میں اساتذہ کے تربیتی اداروں کو عالمی معیار کے مطابق لانے' اساتذہ کی تدریسی صلاحیتوں کو جدید خطوط پر نصاب کے تقاضوں کے سے ہم آہنگ کرنے اور تعلیمی نصاب کو موجود دور کی ضروریات کے مطابق ڈھالنے سے متعلق کئی اہم تجاویز پر تفصیل سے بحث کی گئی۔اجلاس کے تمام شرکاء اس بات پر متفق تھے کہ جب تک مذکورہ اہداف کو حاصل نہیں کیا جائے گا اس وقت تک تعلیم کے شعبے میں ترقی ممکن نہیں ہے۔ صوبائی وزیر تعلیم نے اپنے اس عزم کا اعادہ کیا کہ تعلیم کے تمام شعبوں میں صوبے بھر بہترین خدمات بچوں کو فراہم کی جائیں گی اور اس مقصد کے حصول کے لئے نجی شعبے کا تعاون بھی حاصل کیا جارہا ہے۔صوبائی وزیر تعلیم جام مہتاب حسین ڈھر نے مزید کہا کہ وزیر اعلی سندھ نے سندھ کیوریکولم اتھارٹی کے قیام کی منظوری دے دی۔ اتھارٹی کے قیام سے تعلیمی نصاب کو جدید خطوط پر ڈھالنے اور کئی مسائل کو حل کرنے میں مدد ملے گی جبکہ اس اتھارٹی کو احسن طریقے سے چلانے کے لئے اوپن مارکیٹ سے اہل اور قابل افراد کی خدمات حاصل کی جائیں گی۔انہوں نے کہاکہ یہ بات باعث اطمینان ہے کہ گذشتہ دو ماہ کے دوران کراچی ' حیدرآباد ' سکھر ' شہید بے نظیر آباد 'میرپورخاص اور لاڑکانہ میں 1467 بند اسکولوں کو دوبارہ کھول دیا گیا ہے اور مزید بند اسکول جلد کھولے جائیں گے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر