نئی نسل میں دائیں بازو کی شدت پسندانہ سیاست دیکھ رہا ہوں، جمہوریت کی مضبوطی کے لئے طلبا یونینز پر عائد پابندی ختم کی جائے :اعتزاز احسن

نئی نسل میں دائیں بازو کی شدت پسندانہ سیاست دیکھ رہا ہوں، جمہوریت کی مضبوطی ...
نئی نسل میں دائیں بازو کی شدت پسندانہ سیاست دیکھ رہا ہوں، جمہوریت کی مضبوطی کے لئے طلبا یونینز پر عائد پابندی ختم کی جائے :اعتزاز احسن

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور ( ڈیلی پاکستان آن لائن)سینیٹ میں قائد حزب اختلاف  چوہدری اعتزاز احسن نے کہا ہے کہریاست اور شدت پسندوں کی سزاوں نے دائیں بازو کی سیاست کو کمزور کیا ، اب قوم کے بچوں کو محمود غزنی کے ساتھ نوازشریف کی کتاب بھی پڑھنی پڑ رہی ہے،نئی نسل میں شدت کے ساتھ دائیں بازو کی سیاست دیکھ رہا ہوں ،جمہوریت کی مضبوطی کے لیے طلبا یونینز پر  عائد پابندی ختم کی جائے۔

 معروف سیاست دان معراج محمد خان کی سیاسی خدمات کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر  چوہدری اعتزاز احسن  نے کہا کہ معراج محمد خان نے طلبا سیاست کو جمہوری جد جہد کے لیے استعمال کیا اور آمروں کو للکارا اس لیے اب بھی وقت کی ضرورت ہے کہ جمہوریت کی مضبوطی کے لیے طلبا یونینز پر پابندی ختم کی جائے اور سیاست میں اہم کردار ادا کرنے کے لیے طلبا کو مواقع دیے جائیں۔اعتزاز احسن نے کہا کہ پہلے قوم کے بچے محمود غزنوی کی کتابیں پڑھتے تھے تاہم اب اسکولوں اور لائبریریوں میں انہیں نواز شریف کی کتاب پڑھنا پڑے گی۔تقریب سے سپریم کورٹ بار کونسل کے صدر رشید اے رضوی نے کہا کہ دائیں بازو کی سیاست کا اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے ، آج کسان مزور اور طلبا کے حقوق کی بات کرنے والا کوئی نہیں ، میرا ایمان ہے کہ جج اور جرنیل کو کبھی بھی سیاست میں حصہ نہیں لینا چاہیے۔ تقریب سے حسین نقی ،بابا نجمی سمیت دیگر نے بھی خطاب کیا۔

مزید : قومی