پرائیویٹ سکولوں کو  یکساں نظام تعلیم کے نفاذ پر اعتراض نہیں لیکن اس سے مسائل حل ہونے کی بجائے مزید پیچیدہ ہو جائیں گے:ناصر قصوری

پرائیویٹ سکولوں کو  یکساں نظام تعلیم کے نفاذ پر اعتراض نہیں لیکن اس سے مسائل ...
پرائیویٹ سکولوں کو  یکساں نظام تعلیم کے نفاذ پر اعتراض نہیں لیکن اس سے مسائل حل ہونے کی بجائے مزید پیچیدہ ہو جائیں گے:ناصر قصوری

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) بیکن ہاؤس سکول سسٹم کے ڈائریکٹر ناصر قصوری نے کہا ہے کہ پرائیویٹ سکولوں کو ملک میں یکساں نظام تعلیم کے نفاذ پر کوئی اعتراض نہیں لیکن اس سے مسائل حل ہونے کی بجائے مزید پیچیدہ ہو جائیں گے، اصل مسئلہ نصاب نہیں بلکہ سرکاری سکولوں میں قابل اور جدید معیار تعلیم سے ہم آہنگ اساتذہ کی کمی ہے

سرکاری ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے بیکن ہاؤس سکول سسٹم کے ڈائریکٹر ناصر قصوری نے کہا ہے کہ فیسوں میں کمی کے حوالے سے سپریم کورٹ کے حکم پر من و عن عمل ہوگا، کچھ والدین کو سپریم کورٹ کا فیصلہ سمجھنے میں غلطی ہوئی ہے، نجی سکولوں پر بے تحاشہ منافع خوری اور حکومت سے مفت پلاٹ لینے کا الزام درست نہیں ہے۔ ناصر قصوری نے کہا ہے کہ یکساں نصاب سے نظام تعلیم کے مسائل میں مزید اضافہ ہو گا ،اصل مسئلہ نصاب کا نہیں بلکہ اچھے اور قابل اساتذہ کا ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت پرائیویٹ سکولوں کو کوئی سہولت فراہم نہیں کرتی، مفت پلاٹ لینے اور بے تحاشہ منافع کمانے کا الزام درست نہیں ہے، سپریم کورٹ کے فیسوں میں کمی کے فیصلے پر فروری کے وسط سے عمل درآمد شروع ہو جائے گا لیکن پانچ ہزار یا اس سے کم فیس والوں کو کوئی رعایت نہیں ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ کچھ والدین کو سپریم کورٹ کا آرڈر سمجھ نہیں آیا اسلئے وہ فیصلے کے خلاف نظر ثانی کی اپیل میں چلے گئے حالانکہ سپریم کورٹ نے واضح طور پر اپنے حکم میں لکھا ہے کہ پانچ ہزار سے اوپر کی فیس پر بیس فیصد رعایت ملے گی لیکن والدین پانچ ہزار روپے سے کم فیس پر بھی یہ سہولت حاصل کرنے پر بضد ہیں تا ہم سپریم کورٹ جو بھی فیصلہ کرے گی ہمیں قبول ہوگا۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد