وزیراعلی خیبر پختونخوا محمود خان کیساتھ کوئی اختلاف نہیں، گورنر شاہ فرمان

وزیراعلی خیبر پختونخوا محمود خان کیساتھ کوئی اختلاف نہیں، گورنر شاہ فرمان

پشاور (مانیٹرنگ ڈیسک ) وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا کیساتھ کسی بھی قسم کا کوئی اختلاف نہیں، گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان کا وضاحتی بیان سامنے آ گیا۔ وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے چیف سیکریٹری اور آئی جی کو تبدیل کر دیا تھا۔ شاہ فرمان ضم ہونیوالے قبائلی اضلاع میں تین محکموں کا اختیار لینے پر بضد ہیں۔خیبر پختونخوا کے گورنر اور وزیراعلیٰ میں اختیارات کی جنگ، معاملے پر گورنر خیبر پختونخوا شاہ کا وضاحتی بیان سامنے آ گیا۔ انھوں نے اپنے بیان میں کہا ہے صوبہ بالخصوص قبائلی اضلاع کی ترقی و خوشحالی سمیت تمام امور پر ہم دونوں ایک پیج پر ہیں، وزیراعلی خیبر پختونخوا محمود خان صوبہ کے چیف ایگزیکٹو ہیں، وہ آئی جی پولیس اور چیف سیکرٹری کے تبادلے کا اختیار رکھتے ہیں اور انہوں نے اپنا اختیار استعمال کیا۔خیبر پختونخوا کے وزیراعلیٰ محمود خان اور گورنر شاہ فرمان میں اختلافات کی بنیادی وجہ یہ سامنے آئی تھی کہ گورنر شاہ فرمان مواصلا ت، بلدیات اور داخلہ کے محکمے اپنے پاس رکھنے پر بضد ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے وزیراعلیٰ کے پی، آئی جی اور چیف سیکریٹری چاہتے ہیں لیویز اورخاصہ دارفورس ایکٹ 2019 لا کر دونوں فورسز کو محکمہ پولیس میں ضم کر دیا جائے لیکن گورنر ایسا نہیں چاہتے، اس لئے معاملہ الجھ گیا۔گورنر نے قبائلی اضلاع کیلئے ایڈوائزی بورڈ تشکیل دیا ہے۔ جس کا مقصد قبائلی اضلاع میں گڈ گورننس کو عملی جامہ پہنانا اور قبائلی روایات کا تحفظ کرنا ہے۔ بعض وزراء نے گورنر کو اختیارات دینے کی مخالفت کی ہے۔

شاہ فرمان

مزید : صفحہ آخر