اسلام آباد ہائیکورٹ پر حملے میں ملوث 17 وکلا کو توہین عدالت کے نوٹس جاری

 اسلام آباد ہائیکورٹ پر حملے میں ملوث 17 وکلا کو توہین عدالت کے نوٹس جاری

  

 اسلام آباد(آئی این پی)اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس بلاک پر حملہ کرنے والے 17 وکلا کو توہین عدالت کے نوٹسز بھجوا د یئے  گئے۔اسلام آباد ہائیکورٹ پر حملہ کرنے والے وکلا کو ڈپٹی رجسٹرار جوڈیشل کی جانب سے جاری توہین عدالت کے شوکاز نوٹس میں کہا گیا ہے کہ وہ اس ہجوم کا حصہ تھے جس نے چیف جسٹس اور دیگر ججز کو یرغمال بنایا۔نوٹس میں کہا گیا ہے کہ چیف جسٹس بلاک کا مرکزی دروازہ توڑا اور سیکیورٹی عملے پر حملہ کیا جس کے باعث عدالتی کارروائی کئی گھنٹوں تک معطل رہی، سائلین کو انصاف تک رسائی سے محروم رکھا۔ نوٹس میں کہا گیا ہے کہ سات دن میں تحریری وضاحت جمع کرائیں اور 18 فروری کو ذاتی حیثیت میں پیش ہو کر بتائیں کہ آپ کو توہین عدالت آرڈیننس کے تحت کیوں سزا نہ سنائی جائے۔جن وکلا کو شوکاز نوٹسز جاری کیے گئے ہیں ان میں احسن مجید گجر، ارباب ایوب گجر، فیصر جدون، فرزانہ مغل، حماد ڈار، نصیر کیانی، نازیہ عباسی، راجہ زاہد، شائستہ تبسم، یاسمین راشد سندھو، کلثوم رفیق، کامران یوسف زئی، حافظ مظہر جاوید، خالد محمود، راجہ امجد، راجہ فرخ اور تصدق حنیف شامل ہیں۔

  توہین عدالت

مزید :

صفحہ اول -