قومی کھیل ہاکی، عروج سے زوال کا سفر


پاکستان کا قومی کھیل ہاکی جو دنیا ئے عالم میں پاکستان کی وجہ شہرت تھا جس کھیل کی وجہ سے پاکستانی پرچم دہائیوں تک پوری دنیا کے میدانوں میں سر بلند رہا جس کھیل نے پاکستان کا اولمپک، ورلڈکپ اور چیمپیز ٹرافی میں ناقابل شکست بنا کر متعدد گولڈ میڈلز کا حقدار بانا کر دنیائے ہاکی کا سردار بنا دیا اس کھیل پر جب زوال آیا تو طویل زوال ٹھہرا زوال کو تجربات میں تبدیل کر دیا گیا اور ہر شکست کے بعد جواز پیش کر دیا جاتا رہا کہ ٹیم پر تجربات کا سلسلہ جاری ہے ۔


ہمیں ماضی کی غلطیوں سے سبق سیکھ کر اپنے حال کو بہتر بنانا ہے ۔ کیونکہ ہمارا بہتر حال ہی بہتر مستقبل کا ضامن ہے پاکستان ہاکی فیڈریشن پر ایک طویل عرصہ ڈنگ ٹپاؤ پالیسی والے غیر ذمہ دار لوگوں کو مسلط رکھا گیا جسکی وجہ سے قومی کھیل کو زوال سے عروج کی طرف لانے پر کوئی کا م نہیں ہو سکامگر نااہل عہدیداران کے خلاف کسی اولمپک پلیئرنے آواز بلند نہیں کی بہت سے اولمپئنزتجربات کرکے قومی کھیل کی کشتی کو ڈوبنے سے نہ بچا سکے ۔ تو آخر کار ہاکی کے تابوت میں آخری کیل ٹھونکنے کے لئے شہباز احمد سنیئر کو پاکستان ہاکی فیڈریشن کا سیکرٹری جنرل بنا دیا گیا شہباز احمد سنیئرپاکستان ہاکی کا وہ ورسٹائل کھلاڑی جس کا کھیل آرٹ کے طور پر پہچاناجاتا ہے جس کی پرواز کو روکنے کے لئے دنیا بھر کی ٹیمیں اپنے کئی کھلاڑی فکس کردیتی تھیں کہ شہباز کی پرواز روکی جا سکے مگر جھپٹنا جھپٹ کر پلٹنا اور پلٹ کر جھپٹنا شہباز کے کھیل کا خاصہ تھاجس نے چار اولمپک گیمز اور چار ورلڈ کپ کھیل کر پاکستان کی نمائندگی کی تھی ایسے کھلاڑی کو پاکستان ہاکی فیڈریشن کا سیکرٹری بنا کر یہی سوچا گیا کہ جب سابقہ کچھ نہیں کر سکے تو یہ صاحب بھی کچھ کمال نہیں کر سکیں گے مگر شہباز احمد سنیئر کے بارے میں تمام منفی تبصرے غلط ثابت ہوئے کیونکہ شہباز نے ہاکی کی فیڈریشن میں اپنا عہدہ سنبھالنے کے بعد اپنی ٹیم میں ایسے ہیرے روشناس کروائے جن میں کام کرنے کا جذبہ اور انتھک محنت کا عنصر شامل تھا پاکستان بھر میں ہاکی کے زوال کی سب سے بڑی وجہ کو تلاش کرکے اس وجہ کو ختم کرنے کے لئے شہباز کی ٹیم نے شب و روز کوششیں کیں سکول اور کلب ہاکی کو زندہ کرنے کے لئے ضلع اور تحصیل سطح پر کوششیں ہوئیں جن کی وجہ سے آج سکول اور کلب ہاکی کھیلی جانی شروع ہوچکی ہے ۔ گر اس


روٹ لیول پر جوکام 20سال پہلے ہونا چاہیے تھا شہباز نے 20مہینوں میں مکمل کرڈالا۔ آج ملک بھر میں سکول اور کلب ہاکی اسی شوق وجذبہ سے دوبارہ شروع ہے کیونکہ فیڈریشن عہدیداران کو بخوبی یہ احساس ہے کہ گراس روڈ لیول سے ہاکی کو پرموٹ کرکے ہی قومی سطح پر کھلاڑیوں کی ایک لاٹ تیار ہوسکتی ہے جس میں ہونہار کھلاڑی قومی ٹیم کی نمائندگی کے لئے وافر دستیاب ہونگے ۔ اس کے علاوہ بھی ایک جونیئر لڑکوں کا گروپ بنایا گیا جن کو ترتیب اور کھیلنے کے لئے باہر بھیجا گیا اور اس پر کام جاری ہے ۔ فیڈریشن کے پاس فنڈز کی کمی بھی بہت سارے مسائل کا سبب ہے دنیا بھرکے کھلاڑیوں کو کھیلنے کیلئے پاکستان مدعو کیا جارہا ہے ۔ ہاکی لیگ منقد کروانے کا پروگرام بھی بن چکا ہے جس سے قومی کھیل کا شوق ملک بھرمیں بڑھے گا اس کے لئے بھی فنڈز کی ضرورت ہے جس پر حکومتی سطح پرسرپرستی ضروری ہے پاکستان بھر میں ہر ڈویثر نل ھیڈکوارٹر پر ایک اکیڈمی بنائی جانی ضروری ہے جہاں پر ہاکی کی مکمل کٹ کھلاڑیوں کو باالکل مفت فراہم کی جائے اور منتخب کھلاڑیوں کے سکول اور کالج کی فیس بھی اس پلیٹ فارم سے ادا کی جائیں جہاں سے کھلاڑیوں کو منتخب کر کے آگے لایا جائے جن کے لئے فیڈریشن کی سفارش پر محکمہ جات میں ملازمتیں فراہم کی جائیں ہاکی کے کھلاڑیوں کے لئے کالج میں داخلہ کیلئے خصوصی کوٹہ ہونا چائیے۔
تاکہ والدین اپنے بچے کے مستقبل کو محفوظ تصورکر کے ہاکی کھیلنے کی لئے اپنا تعاون کریں ۔ ہم سب کو مل جل کر ہاکی کے عروج کے لئے فیڈریشن کے اقدامات کی حمائت کرنا ہوگی جن کی وجہ سے ہاکی زندہ ہورہی ہے۔


۔ ہاکی پر زوال 20سال سے زائد عرصہ پر محیط ہے اب عروج کے لئے بھی 2/3سال فیڈریشن کی دینا ہوں گے گر اس روٹ لیول سے کھلاڑیوں کی ایک لاٹ قومی سطح پر جائے گی آج کی ہاکی میں فزیکل فٹنس کو مرکزی حیثیت حاصل ہے فیڈریشن اس پر بھی کام کررہی ہے جس کے مثبت نتائج سامنے آئیں گے فیڈریشن پر تنقید برائے تنقید کرنے سے کام نہیں چلے گا ہاکی فیڈریشن کے اقدامات جن کی وجہ سے ملک بھرمیں ہاکی زندہ ہورہی ہے کو خراج تحسین پیش کریں تاکہ فیڈریشن کے عہدیداران مزید تندہی اورمحنت سے شوق و جذبہ کے ساتھ اپنی تمام تر توانائیاں بروئے کار لائیں پاکستان میں ٹیلنٹ کی کمی نہیں ہے زرا نم ہو تو مٹی بہت زرخیز ہے ساقی ہاکی فیڈریشن کے عہدیداراں میں کچھ کر گزرنے کا جذبہ ہے آئیں ہاکی کے عروج کے سفر میں اپنی فیڈریشن کا بھرپور ساتھ دیں تنقید کریں مگر مثبت کیونکہ مثبت تنقید ہی تعمیر کے راستوں کا تعین کرتی ہے

مزید : رائے /کالم

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...