مشال کیس ، تفتیشی افسر پر جرح مکمل ، ملزم جونی کا بیان قلمبند نہ ہو سکا

مشال کیس ، تفتیشی افسر پر جرح مکمل ، ملزم جونی کا بیان قلمبند نہ ہو سکا

ہری پور (صباح نیوز) مشال خان قتل کیس میں تفتیشی فاضل خان پر وکلاء کی جرح مکمل اگلی سماعت 16جنوری تک ملتوی کر دی گئی گرفتار ملزم اظہار عرف جونی کا بیان قلمبند نہ ہو سکا کیس دوبارہ ٹرائل میں بھی جا سکتا ہے قانونی ماہرین زرائع کے مطابق مردان عبدالولی خان یونیورسٹی شعبہ صحافت کے طالب علم توہین مذہب کے الزام پر قتل ہونے والے مشال خان قتل کیس کی سماعت گزشتہ روز دہشت گردی کی خصوصی عدالت سینٹرل جیل ہری پور کے ٹرائل کورٹ میں ہوئی جس میں تفتیشی افسر فاضل خان پر وکلاء کی جانب سے جرح کا عمل مکمل کرلیا گیا ہے گزشتہ تین سماعتوں کے دوران وکلاء کی جانب سے تفتیشی انسپکٹر فاضل خان پر مسلسل جرح کی جارہی تھی گزشتہ سماعت کے دوران والد مشال خان اقبال خان ان کے سرکاری وکلاء بھی موجود تھے مشال خان قتل کیس میں 61 ملزمان پر فرد جرم عائد کی گئی ہے جن میں اب تک 58 ملزمان گرفتار ہیں باقی تین ملزمان ابھی تک مفرور ہیں مشال خان قتل کیس میں ابھی تک 51 گواہان کے بیان ریکارڈ کئے ج جا چکے ہیں جن میں یونیورسٹی کے ملازمین پروفیسرزطالبعلم ڈاکٹرزانویسٹی گیشن افسر پولیس کے اہلکار بھی شامل ہیں جبکہ وڈیولنک سے بھی گواہ مشال خان کے دوست عبداللہ کا بیان بھی ریکار ڈ کیا جا چکا ہے جبکہ اس کیس میں مشال خان کے والد اقبال خان لالہ کا بیان بھی گزشتہ سماعت پر ریکارڈ کیا جا چکا ہے ۔

مشال کیس

مزید : علاقائی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...