سیشن کورٹ میں وکلاکا پھر عدالتی اہلاکر پر تشدد ، ملازمین کا شدید احتجاج

سیشن کورٹ میں وکلاکا پھر عدالتی اہلاکر پر تشدد ، ملازمین کا شدید احتجاج

لاہور(نامہ نگار )سیشن کورٹ میں وکلاء نے ایک بار پھرعدالتی اہلکار کو تشدد کا نشانہ بنا ڈالا،عدالتی عملے نے وکلا ء کے روئیے کے خلاف بائیکاٹ کرتے ہوئے لاہور ہائیکورٹ کے ججز گیٹ کے سامنے احتجاج کرتے ہوئے دھرنا دیا۔احتجاج کے باعث مال روڈ پر ٹریفک جام ہونے سے ایمبولینسز اور دیگر گاڑیاں پھنسی رہیں،احتجاج سے سیشن کورٹ میں ہزاروں مقدمات کی سماعت بھی متاثر ہوئی جبکہ دھرنے کی وجہ سے مال روڈ پر شہریوں کو بھی شدیدمشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔تفصیلات کے مطابق سیشن عدالت میں مبینہ طور پروکیل رانا محمد شکیل کی جانب سے فاضل جج کے اہلمد احسان کو تشدد کا نشانہ بنائے جانے کے خلاف عدالتی اہلکاروں نے گزشتہ روزعدالتی کام بند کردیا،عدالتی عملہ وکلاء کے رویئے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے ہائیکورٹ پہنچ گیااورعدالتی اہلکاروں نے مال روڈ پر ہائی کورٹ کے ججز گیٹ کے سامنے وکلاء مخالف نعرے بازی کی اور دھرنا دیا،ملازمین میں سے عبدالمالک سمیت دیگر نے رجسٹرارلاہورہائیکورٹ سے ملاقات کی،اس موقع پر سیشن جج لاہور عابد حسین قریشی بھی موجود تھے،وفد کو تشدد کرنے والے وکیل کے خلاف مقدمہ درج کرانے کی یقین دہانی کرائی گئی، نمائندہ وفد نے باہر آکر احتجاج ختم کرنے کا اعلان کیا لیکن ان کے ساتھی ملازمین نے احتجاج ختم کرنے سے انکار کردیااورمذکورہ وکیل کے خلاف فوری مقدمہ درج کرنے اور اس کی گرفتاری کا مطالبہ کیا، ایس پی سول لائنز صفدر رضا کاظمی بھی موقع پر پہنچ گئے، انہوں نے ملازمین کے ساتھ احتجاج ختم کرنے کے لئے مذاکرات کئے،ایس پی کا کہنا تھا کہ وکلاء کی جانب سے عدالتی ملازمین پر تشدد کے رحجان میں اضافہ ہوتا جارہاہے۔

سیشن کورٹ

مزید : صفحہ آخر