وکلا سے ہاتھ جوڑکردرخواست کرتاہوں تشددکاپہلوچھوڑدیں،چیف جسٹس

وکلا سے ہاتھ جوڑکردرخواست کرتاہوں تشددکاپہلوچھوڑدیں،چیف جسٹس

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)الرازی میڈیکل کالج کے الحاق سے متعلق کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ آج وکلاءنے ہڑتال کیوں کر رکھی ہے؟۔اس پر اعتزاز احسن نے کہا کہ قصور واقعے کیخلاف ہڑتال کی جا رہی ہے۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ وکلا سے ہاتھ جوڑکردرخواست کرتاہوں تشددکاپہلوچھوڑدیں، ہڑتال اور احتجاج کرنے والوں پر بھی فائرنگ کی جا رہی ہے،اعتزازاحسن!میں نے کل آپ کوٹی وی پروگرام میں سنا،مانتاہوں آپ کے بغیروکلاتحریک نہیں چل سکتی تھی،اعتزاز احسن کو بطور قانون ساز اب وہی کردارادا کرنا ہوگا،آپ کو صحت اور عدلیہ میںاصلاحات کیلئے کردارادا کرنا ہوگا،مجھے ڈاکٹرزکی ایسی ٹیم چاہئے جومیڈیکل کالج کی انسپکشن کرسکے،آپ کاکردارمیڈیکل کالجزکے معاملے پربھی درکارہے۔

اس پر اعتزاز احسن نے کہا کہ عدلیہ تحریک کے منفی پہلو بھی سامنے آئے،پرتشددوکلااور مغرور ججز عدلیہ تحریک کانتیجہ ہے۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہ کہ دعاکریں غرور ہمارے لئے موت کا باعث بنے،ججز کو کسی صورت مغرور نہیں ہونا چاہئے،تشدد روکنا آپ وکلا کی ذمہ داری ہے ،وکلا سے ہاتھ جوڑکردرخواست کرتاہوں تشددکاپہلوچھوڑدیں۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ زینب قوم کی بیٹھی تھی ،قصورواقعے پر پوری قوم کا سرشرم سے جھک گیا ،مجھ سے زیادہ میری اہلیہ گھر میں پریشان بیٹھی ہے ،دکھ اور سوگ اپنی جگہ لیکن ہڑتال کی گنجائش نہیں۔

سپریم کورٹ نے خیبرمیڈیکل یونیورسٹی کو داخلہ ٹیسٹ کے نتائج جاری کرنے کی اجازت دے دی اورکیس کی سماعت 16 جنوری تک ملتوی کردی ۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /اسلام آباد

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...