جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق رنگے ہاتھوں پکڑے گئے

جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق رنگے ہاتھوں پکڑے گئے
جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق رنگے ہاتھوں پکڑے گئے

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

قصور(ڈیلی پاکستان آن لائن) قصور میں معصوم زینب کے اغواءاور قتل نے پورے علاقے میں ہلچل مچادی اور حالات مسلسل دوسرے روز بھی کشیدہ ہیں لیکن سیاستدان بھی ایک دوسرے پر بازی لے جانے کی کاوش میں ہیں ، ان میں سے ہی ایک سراج الحق بھی تھے جنہوں نے ایسا بیان داغ دیا جو حقائق کے منافی تھا۔

قصورشہر میں مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق نے کہاہے کہ زینب غریب کی بیٹی تھی ،اس لیے گورنر اوروزیر اعلیٰ  نہ پہنچے لیکن جس وقت سراج الحق میڈیا سے گفتگو کررہے تھے ، اس سے چند گھنٹے قبل ہی وزیراعلیٰ پنجاب متاثرہ فیملی سے ان کے گھر پہنچ کر تعزیت کرچکے تھے ۔

سراج الحق کا کہنا ہے قصور کو ظلم کا مرکز بنا دیا گیا، زینب 5 روز سے لاپتہ تھی لیکن حکومت کا ضمیر کیوں نہیں جاگا۔ انہوں نے کہا وزیراعلیٰ صاحب ننھی جان کے قتل کا جواب دیں، شہر کی سیاسی قیادت بھی مستعفی ہو، وہ عوام کی نمائندگی کا حق کھو چکے ہیں۔

شہبازشریف کے دورہ قصور کی تفصیلات کیلئے یہاں کلک کریں۔

مزید : سیاست /قومی