چیئرمین انوائرمنٹل ٹربیونل خیبرپختونخوا کو ہائی کورٹ کے جج کے برابرتنخواہ اوردیگرمراعات دینے کے احکامات جاری

چیئرمین انوائرمنٹل ٹربیونل خیبرپختونخوا کو ہائی کورٹ کے جج کے برابرتنخواہ ...

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے چیف جسٹس وقار احمد سیٹھ اورجسٹس عبدالشکور پرمشتمل دورکنی بنچ نے چیئرمین انوائرمنٹل ٹربیونل خیبرپختونخوا کو ہائی کورٹ کے جج کے برابرتنخواہ اوردیگرمراعات دینے کے احکامات جاری کردئیے ہیں فاضل بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز درخواست گذار عبداللطیف خان چیئرمین انوائرمینٹل ٹربیونل خیبرپختونخواکی جانب سے جہانزیب محسودایڈوکیٹ کی وساطت سے دائر رٹ منظورکرتے ہوئے جاری کئے اس موقع پر عدالت کو بتایا گیاکہ درخواست گذار کو تین سالوں کیلئے بطور چیئرمین انوائرمنیٹل ٹربیونل چیئرمین مقررکیاگیاجبکہ انوائرمنٹل ٹربیونل ایکٹ کے تحت چیئرمین پشاورہائی کورٹ کے جج کے برابرہوگا اوراس کی تنخواہ اوردیگرمراعات بھی ہائی کورٹ کے جج کے برابرہوں گی اوریہ قوانین 1997ء کے ہیں جبکہ 2016ء میں نئے رولزوضع کئے گئے جس کے تحت اس پوسٹ کوگریڈ21کے برابرکیاگیاجبکہ قانون کے تحت اگرکسی پوسٹ کیلئے تنخواہ ہائی کورٹ کے جج کے برابرہوگی تو رولزکے تحت اس میں ترمیم نہیں کی جاسکتی کیونکہ قانون کو رولزپرفوقیت حاصل ہے اورقوانین کے تحت ہائی کورٹ کے حاضرجج کو بھی اس پوسٹ پرمقررکیا جاسکتاہے اس ناطے گریڈ21کی تنخواہ غیرقانونی ہے اس موقع پر ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل نے عدالت کو بتایا کہ درخواست گذار اس حوالے سے باقاعدہ طورپرکنٹریکٹ دستخط کرچکاہے اوراس وقت کوئی اعتراض نہیں اٹھایا جبکہ صوبائی حکومت کے فنڈزبھی محدود ہیں اور اس حوالے سے رولزپہلے سے موجود ہیں عدالت عالیہ کے فاضل بنچ نے دونوں جانب سے دلائل مکمل ہونے پررٹ منظورکرکے چیئرمین انوائرمنٹل ٹربیونل کو ہائی کورٹ کے جج کے برابرتنخواہ دینے کے احکامات جاری کردئیے ہیں

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...