پروہا کی لیگ میں قومی ٹیم کی شرکت لازمی بنائی جائے : طاہر زمان

پروہا کی لیگ میں قومی ٹیم کی شرکت لازمی بنائی جائے : طاہر زمان

لاہور(سپورٹس رپورٹر)اولمپئن طاہر زمان نے پاکستان ہاکی فیڈریشن کو مشورہ دیاہے کہ وہ ٹوءِنٹی ٹوئنٹی اولمپکس کی تیاری کو سامنے رکھ کر پروہاکی لیگ میں قومی ٹیم کی شرکت کو لازمی یقینی بنائے۔میڈیاسے خصوصی گفتگو کے دوران طاہر زمان کا کہنا تھا کہ انٹرنیشنل ہاکی سرگرمیاں معطل نہیں کرنی چاہیے، پرو ہاکی لیگ میں شرکت سے نوجوان کھلاڑیوں کو دنیا کی بہترین ٹیموں کے ساتھ 16 میچز کھیلنے کو مل رہے ہیں، اس سنہری موقع کو گنوانا نہیں چاہیے۔ اس سے ہمارے پاس اولمپکس میں کوالیفائی کرنے کا بہترین چانس ہے۔قومی ٹیم کی جب تک بین الاقوامی سطح پر پرفارمنس بہتر نہیں ہوگی اس وقت تک ڈومیسٹک ہاکی پر بھی سرمایہ کاری کے رزلٹ نہیں ملیں گے۔ انٹرنیشنل کلینڈر آف ایونٹس کے مطابق قومی کھلاڑیوں کو کھلا کر ہی دوسری ٹیموں کے ساتھ کارکردگی کا خلا پْر کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ انٹرنیشنل ہاکی اور ڈومیسٹک ہاکی دونوں کو ساتھ لیکر چلنا ہوگا، پھر ہی ڈویلمپنٹ ہوگی اور میدان میں اتر کرہی رزلٹ ملیں گے۔طاہر زمان نے واضح کہا کہ ان نئے کھلاڑیوں سے ہمیں یہ امید نہیں کرلینی چاہیے کہ یہ فوری نتائج دینا شروع کردیں گے، ہمیں صبر اور ان کو سپورٹ کرکے وقت کا انتظار کرنا ہوگا۔بیلجیم کی مثال ہمارے سامنے ہے، اس نے 12 برس پہلے ٹیم کی تشکیل نو کرنا شروع اور 12ویں پوزیشن سے وہ اب ورلڈ چیمپئن بنا ہے، بھارت نے اپنی ہاکی اور ڈویلپمنٹ پر پیسہ خرچ کیا، اس نے پانچ بہترین ٹیموں میں جگہ بنالی ہے۔

ہمیں بھی اسی سوچ کے ساتھ آگے بڑھنیکی ضرورت ہے۔غیر ملکی کوچز کے سوال پر طاہر زمان نے کہا کہ پارٹ ٹائم کوچز کو لانے میں کوئی حرج نہیں، جو پنالٹی کارنر پش، گول کیپنگ ٹریننگ، گول اسکوررنگ، ڈیفنس اور دوسری اسکلز کو بہتر بنانے میں معاون ثابت ہوسکیں۔ اس کے ساتھ ٹیم انتظامیہ کی طویل عرصے تک تقرری بہت ضروری ہے، جس سے کوچز بھی اعتماد کے ساتھ کام کرسکیں، لڑکوں کو بھی پتہ ہو کہ ہمیں ان ہی لوگوں کے ساتھ کام کرنا ہے۔ باربار تبدیلیوں سے فائدہ تو شاید کم ہو لیکن نقصان بہت زیادہ ہوگا۔سٹائل آف ہاکی کے بارے سوال ایف آئی ایچ کوالیفائیڈ کوچ نے واضح کیا کہ ہمیں اس چیز کو دیکھنا ہوگا کہ وہ کون سا ایسا طریقہ کار ہے جس پر چل کر دوسری ٹیمیں ہم سے آگے نکل گئی ہیں، نہ کہ ہم سب کچھ چھوڑ کر واپس اپنے پورے ایشین اسٹائل پر کام شروع کردیں، 30 سال پرانی ہاکی اب نہیں کھیلی جارہی، ایشین اسٹائل اس وقت تک کامیاب تھا جب آف سائیڈ کا رول تھا، اس کے ختم ہونے کے بعد ایشین اسٹائل کی افادیت بھی دم توڑ گئی ہے۔ اب بدلتے زمانے اور قوانین کے ساتھ ہاکی میں کامیابیاں مل رہی ہیں۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی


loading...