پولیس اسپتال گارڈن کی اپ گریڈیشن کے حوالے سے سفارشات طلب

پولیس اسپتال گارڈن کی اپ گریڈیشن کے حوالے سے سفارشات طلب

کراچی (کرائم رپورٹر)آئی جی سندھ ڈاکٹرسید کلیم امام نے سینٹرل پولیس آفس کراچی میں سندھ پولیس بینویلنٹ/ ویلفیئرفنڈبورڈ کے آٹھویں اجلاس کی صدارت کی۔اجلاس میں بورڈ ممبران میں شامل ایڈیشنل آئی جی کراچی ،ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی،ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹرزسندھ،ڈی آئی جی فائنانس/ویلفیئر، سی پی ایل سی چیف، گل احمد ٹیکسٹائل ملز کے ڈائریکٹر کے علاوہ ایڈیشنل آئی جی اسپیشل برانچ،فائنانس اور محکمہ داخلہ سندھ کے نمائندگان نے بھی شرکت کی۔آئی جی سندھ نے اجلاس کو ہدایات دیں کہ پولیس ملازمین کو ہیلتھ انشورنش/میڈیکل کارڈ کے اجراء کے حوالے سے اور پولیس اسپتال کراچی میں دستیاب طبی سہولیات کی اپ گریڈیشن کے حوالے سے تمام تر اسٹڈی جائزہ اور خصوصی حوالہ جات پر مشتمل جامع سفارشات برائے ملاحظہ و مذید ضروری اقدامات آئندہ بورڈ اجلاس پیش کی جائیں۔انہوں نے مذید کہا کہ اسپتال ہذٰا سے ناصرف پولیس ملازمین، انکی فیملیز بلکہ عام شہریوں کو بھی تمام تر طبی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے ۔اجلاس میں رواں سال پہلی سہہ ماہی جنوری تا مارچ2019ء ؁ پولیس ملازمین کی کم وبیش 5418 بیواؤں کو 5000 روپئے کے حساب سے77.2ملین کی رقم آن لائن انکے اکاؤنٹس میں منتقلی کی بھی منظوری دی گئی۔اجلاس میں اس امر پر بھی متفقہ فیصلہ کیا گیا کہ سندھ بھر کی تمام پولیس رینج کی افرادی قوت کے لحاظ سے ہر پولیس رینج کے اکاؤنٹس میں خاطرخواہ رقم براہ راست منتقل کردی جائے تاکہ پولیس کی فلاح وبہبود جیسے اقدامات سمیت اچانک پیش آجانیوالے حادثات کی صورت میں رینج کی سطح پر فوری اور بروقت ریسپانس کو ممکن بنایا جاسکے ۔اجلاس کو بتایا گیا کہ پولیس بیواؤں کی امدادی رقوم 3000 سے بڑھاکر ستمبر2018 ء ؁میں بڑھاکر 5000کردی گئی ہے جبکہ پولیس ملازمین کے بچوں کے لیئے بھی میرج گرانٹ کو 10000سے بڑھاکر50000کردیا گیا ہے ۔اس موقع پر آئی جی سندھ نے ویلفیئر برانچ کے اکاؤنٹس کے آڈٹ کے لیئے سی پی ایل سی اور گل احمد ٹیکسٹائل ملز کے آڈیٹر کی خدمات طلب کرنیکا اعادہ کیا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...