موبائل چھیننے کے واقعات میں کمی ہوری ہے ،افتخا ر شہلوانی

موبائل چھیننے کے واقعات میں کمی ہوری ہے ،افتخا ر شہلوانی

کراچی (اسٹاف رپورٹر) کراچی میں موبایل چھیننے کے واقعات کی روک تھام کی کوششوں کے سلسلہ میں انتطامیہ اور پولیس سے سی پی ایل سی اور اور الیکٹرانکس ایسو سی ایشن کا تعاون قابل تعریف ہے اس تعاون کے مثبت نتائج برآ مد ہوے ہیں اور بتدریج موبایل چھیننے کے واقعات میں کمی وااقع ہوئی ہے۔ یہ بات کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے اپنے دفتر میں چھینے ہوئے موبائل کی برامدگی کے بعد انھیں ان کے مالکان کے حوالہ کر نے کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہی۔ کمشنر نے 35 موبائل فونز ان کے مالکان کے حوالے کئے اس موقع پر چیئرمین سی پی ایل سی زبیر حبیب، سی پی ایل سی کے ڈپٹی چیف شوکت علی ، اسسٹنٹ چیف تیمور صدیقی اور کراچی الیکٹرانکس ڈیلرز ایسو سی ایشن کے عہدیداران اور دیگر بھی مو جو د تھے۔کمشنر نے کہا کہ پولیس اور سی پی ایل سی کی مربوط کوششوں اور شہریوں کے تعاون کی وجہ سے موبایل چھیننے والوں میں خوف بڑھ رہا ہے جس کی وجہ سے موبائل چھیننے کے واقعات میں کمی ہوئی ہے اور امید ہے مزید کمی ہوگی انھوں نے کہا کہ چھینے ہوے موبائل کی برامدگی شہریوں کے تعاون کی وجہ سے ممکن ہوئی ہے ۔ انھوں نے کہا کہ شہریوں کو چاہئے کہ وہ IMEI نمبر کے ساتھ موبایل چھیننے کی صورت میں اس کی شکایت سی پی ایل سی کو 1102 پر ضرور درج کرائیں۔ جب تک شکایت درج نہیں ہوگی انتظامیہ اور پولیس کے لئے ان کے موبائل فون برآمد کر نا مشکل ہو گا۔ ۔ انھوں نے کہا کہ شہری تعاون کریں تو دیگر جرائم کی روک تھام میں بھی اسی طرح کمی کی جاسکتی ہے۔کمشنر کو بتایا گیا کہ جن علاقوں سے موبائل چھینے گئے تھے ان مین صدر کے علاقے، رنچھوڑ لائن، گلشن اقبال، نیو کراچی ناظم آباد، ملیر کورنگی لانڈھی، گڈاپ، گلبہار عیدگاہ اور دیگر علاقے شامل ہیں۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...