بی اے ڈگری کیس ، وفاقی وزیر غلام سرور خان کے حق میں جاری عدالتی عبوری حکم امتناعی ختم

بی اے ڈگری کیس ، وفاقی وزیر غلام سرور خان کے حق میں جاری عدالتی عبوری حکم ...

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائی کورٹ نے وزیر پٹرولیم غلام سرور خان کے حق میں جاری عدالتی عبوری حکم امتناعی ختم کر دیا،عدالت نے قراردیا کہ بادی النظر میں غلام سرور خان کیس کا فیصلہ کروانے میں سنجیدہ نہیں ہیں،عدالت نے ان کی بی اے کی ڈگری منسوخ کرنے کے خلاف 2016ء میں یہ عبوری حکم امتناعی جاری کیاتھا۔جسٹس عائشہ اے ملک نے کیس کی مزید سماعت 11 مارچ تک ملتوی کر دی۔درخواست گزار وفاقی وزیر غلام سرور خان کی طرف سے دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ انہوں نے ایسوی ایٹ انجینئر کا پنجاب بورڈ آف ٹیکنیکل سے ڈپلومہ حاصل کیا،ڈپلومہ ایف اے کے برابر تھا جس کے بعد اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور سے بی اے کیا ،ڈپلومہ کو جواز بناکر مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے متعلقہ یونیورسٹی سے بی اے کی ڈگری کو جعلی قرار دلوادیا،سیاسی دباؤ پر بی اے کی ڈگری کو منسوخ کرانے کا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیاگیا، درخواست گزار غلام سرور خان کی طرف سے استدعا کی گئی ہے کہ بی اے کی ڈگری منسوخ کرنے کا اقدام کالعدم قرار دیا جائے۔گزشتہ روز غلام سرور کے وکیل بیرسٹر علی ظفر عدالت میں پیش نہیں ہوئے ،بورڈ کے لیگل ایڈوائزر نے عدالت کو بتایا کہ درخواست گزار کی جانب سے تاریخ پر تاریخ مانگی جارہی ہے، لیگل ایڈوائزر نے استدعا کی کہ حکم امتناعی خارج کرکے درخواست کا فیصلہ سنایا جائے۔

ڈگری کیس

مزید : علاقائی


loading...