مرد زیادہ ذہین ہوتے ہیں یا خواتین ؟ سائنس نے مشکل آسان کردی

مرد زیادہ ذہین ہوتے ہیں یا خواتین ؟ سائنس نے مشکل آسان کردی
مرد زیادہ ذہین ہوتے ہیں یا خواتین ؟ سائنس نے مشکل آسان کردی

  

کیلیفورنیا (ویب ڈیسک) مرد اپنے آپ کو کتنا ہی ذہین کیوں نہ سمجھیں لیکن سائنس نے ثابت کردیا ہے کہ خواتین کا دماغ مردوں سے زیادہ تیز ہوتا ہے۔

امریکی ریاست کیلیفورنیا میں کی جانے والی ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ خواتین مردوں سے زیادہ فعال دماغ رکھتی ہیں اور یہی وجہ ہے کہ وہ مردوں سے زیادہ ڈپریشن، اینزائٹی اور ذہنی امراض کا شکار ہوتی ہیں، اس تحقیق کے لیے چھیالیس ہزار مرد و خواتین کے دماغوں کا اسکین کیا گیا۔مختلف مشقوں کے ذریعے معلوم ہوا کہ خواتین کے دماغ کے وہ حصے مردوں سے زیادہ فعال ہوتے ہیں جو جذبات پیدا کرنے کا سبب بنتے ہیں یہی وجہ ہے کہ وہ جذبات کے اظہار کے معاملے میں آگے ہوتی ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ خواتین کے دماغ کے ان حصوں میں خون کی روانی بہتر ہوتی ہے یہی وجہ ہے کہ یہ حصے بہتر کام کرتے ہیں۔تحقیق میں یہ بھی دیکھا گیا کہ ان مخصوص حصوں کے برعکس دیگر دوسرے حصے مردوں میں زیادہ فعال پائے گئے جبکہ دماغ کے کچھ حصے ایسے تھے جو مرد و خواتین میں یکساں طور پر کام کرتے ہیں۔

اس سے قبل بھی ہالینڈ میں "ایراسمس" یونیورسٹی میں ہونے والی ایک تحقیق میں 900 کے قریب مردوں اور خواتین کا ایم آر آئی اسکین کیا گیا تھا۔ جس کی بنیاد پر یہ ثابت ہوا تھا کہ مردوں کا دماغ تقریبا 14 فیصدبڑا ہوتا ہے۔

ہالینڈ کے ماہرین کا کہنا تھا کہ مردوں کے دماغ کا حجم بڑا ہونے کے باوجود خواتین ذہنی یادداشت کی جانچ کے امتحانات میں زیادہ بہتر کارکردگی دکھاتی ہیں۔تحقیق میں واضح کیا گیا کہ مردوں کے مقابلے میں خواتین 3.75 آئی کیو پوائنٹس کی حد تک کم ذہین ہوتی ہیں اور ان میں شکل و حجم کے تصرف اور پرکھ کی اہلیت بھی بہت بری ہوتی ہے۔

مزید : تعلیم و صحت