حل طلب مسائل نظر انداز کرنے سے پختونوں کی زندگیوں پر منفی اثرات پڑ رہے ہیں:اسفند یار ولی خان

حل طلب مسائل نظر انداز کرنے سے پختونوں کی زندگیوں پر منفی اثرات پڑ رہے ...
حل طلب مسائل نظر انداز کرنے سے پختونوں کی زندگیوں پر منفی اثرات پڑ رہے ہیں:اسفند یار ولی خان

  



پشاور(ڈیلی پاکستان آن لائن)عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفندیار ولی خان نے پختونوں کو درپیش مسائل کے فوری حل کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ طویل عرصہ سے حل طلب مسائل یکسر نظر انداز کرنے سے پختونوں کی زندگیوں پر منفی اثرات پڑ رہے ہیں،دہشت گردی اور اس کے بعد ہونے والے آپریشنز کے نتیجے میں قبائلی اضلاع میں ہونے والی تباہی سے لاکھوں قبائلی بے گھر ہو گئے اور اربوں روپے کی قومی و ذاتی املاک تباہ ہو گئیں،تعمیر نو کیلئے تاحال کوئی اقدام نہیں اٹھایا گیا۔

اسفند یار ولی خان کا کہنا تھا کہصوبے میں نئے شامل ہونیوالے اضلاع مواصلاتی طور پر منقطع اور ترقیاتی طور پر نظر انداز ہیں، قبائلی اضلاع کا انفراسٹرکچر مکمل طور پر تباہ ہو چکا ہے جس کی تعمیر نو کیلئے تاحال کوئی اقدام نہیں اٹھایا گیا،وزیر اعظم ملک بھر میں 50لاکھ گھروں کی تعمیر کے اعلانات کرتے رہے لیکن قبائلی عوام کے تباہ ہونے والے گھروں کی تعمیر کا کہیں ذکر نہیں ،وفاقی حکومت اس بات کی وضاحت کرے کہ مرکزی و صوبائی حکومتیں اگر فاٹا میں ترقیاتی عمل سے قاصر ہیں تو وہاں پر تعمیر نو کا کام کون کرے گا؟۔ انہوں نے کہا کہ فاٹا میں تباہ حال تعلیمی ادارے فعال وبحال کر کے زندگی کی تمام سہولیات و ضروریات کی فراہمی یقینی بنائے اور تباہی کے نتیجے میں بے گھر ہونے والے لاکھوں قبائلیوں کی باعزت ان کے گھروں کی واپسی کا ٹائم فریم دے۔اسفندیار ولی خان نے پختونوں کے بلاک شناختی کارڈز کا خصوصی طور پر ذکر  کرتے ہوئے کہا کہ ملکی زرمبادلہ کمانے کیلئے لاکھوں پختون مختلف ممالک میں محنت مزدوری اور کاروبار کر رہے ہیں لیکن پختونوں کے بلاک شناختی کارڈز کا مسئلہ تاحال اٹکا ہوا ہے،قبائلی عوام اکیسویں صدی میں بھی موبائل سروس سے محروم ہیں،وزیر اعظم اور دیگر مقتدر حلقے کئی بار قبائلی اضلاع کا دورہ کر چکے ہیں لیکن کئے گئے اعلانات میں سے کسی کو بھی عملی جامہ نہیں پہنایا جا سکا ۔ انہوں نے کہا کہ لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کر کے موبائل فون سروس بحال کی جائے تاکہ قبائلی عوام کالے قانون کے خاتمے کے بعد بنیادی انسانی ضروریات سے مستفید ہو سکیں۔اسفندیار ولی خان نے کہا کہ اے این پی قبائلی اضلاع میں ہونے والے صوبائی اسمبلی کے انتخابات میں بھرپور حصہ لے گی ، انہوں نے پارٹی تنظیموں اور کارکنوں کو ہدایت کی کہ وہ قبائلی اضلاع میں ہونے والے الیکشن کیلئے اپنی تیاریاں زور و شور سے جاری رکھیں۔

مزید : علاقائی /خیبرپختون خواہ /پشاور


loading...