خیبرپختونخوا اسمبلی کا اجلاس، شگفتہ ملک اور شاہد ہ نے تحریک استحقاق پیش کی

خیبرپختونخوا اسمبلی کا اجلاس، شگفتہ ملک اور شاہد ہ نے تحریک استحقاق پیش کی

  



پشاور(نیوز رپورٹر)خیبرپختونخوا اسمبلی اجلاس میں وقفہ سوالات کے دوران اراکین اسمبلی نگہت اورکزئی، عنایت اللہ،شگفتہ ملک،سردار حسین بابک،نعیمہ کشور،لیاقت علی اور فیصل زیب نے محکمہ امداد بحالی،آباد کاری،سماجی بہبود،آبپاشی،زکواۃ وعشر کارکردگی کے متعلق سوالات کئے جن کے جوابات صوبائی وزیر خوراک قلندر خان لودھی اور صوبائی وزیر تعلیم اکبر ایوب خان نے جوابات دیئے،اس دوران اکرم خان درانی،ایم پی اے صاحبزادہ ثناء اللہ،ایم پی اے ملک بادشاہ صالح،ایم پی اے شفیع اللہ،ایم پی اے بہادر خان،ایم پی اے لیاقت علی،ایم پی اے خوشدل خان،ایم پی اے احمد کنڈی،ایم پی اے سردار خان بابک،ایم پی اے وقار احمد خان ایم پی اے نثار احمد خان،ایم پی اے محمد ریاض،ایم پی اے نگہت اورکزئی،ایم پی اے شگفتہ ملک اور ایم پی اے شاہدہ نے تحریک استحقاق ایوان میں پیش کی اور کہا کہ جناب سپیکر صاحب اسمبلی کی معمولی کارروائی روک کر ایک اہم مسئلہ کی جانب مبذول کرانا چاہتا ہوکہ وہ یہ کہ ملاکنڈ ڈویژن میں سیلاب کے بعد لوگوں کو دریاؤں اور ندیوں کے آس پاس اپنی زمینوں سے حکومت نے کام روک رکھا ہے اور ساتھ ہی ساتھ بجری،ریت وغیرہ پر ٹیکس وصول کیا جاتا ہے جس کو حکومت نا تو ٹیکس قرار دتی رہی ہے اور نہ ہی اس رقم کو دوسرا کوئی نام دیتا ہے جبکہ وہ بجری اور ریت پرائیویٹ لوگوں کی زمینوں سے لوگ نکالتے ہیں لیکن حکومت پرائیویٹ لوگوں کی زمینوں سے لئے گئے بجری وریت کے عوض رقم وصول کررہی ہے جو کہ بلا جوازہے اور ظلم وبربریت کی زندہ مثال ہے،نگہت اورکزئی نے کہا کہ مجھے افسوس ہے کہ سپیکر صاحب آپ کے اختیارات بہت کمزور ہے آپ کی کوئی نہیں مانتا سپیکر نے کہا کہ اختیارات گورنر کے پاس ہے خوشدل خان نے کہا کہ سپیکر صاحب آپ کی کرسی کا احترام ہم پر فرض ہے ایجنڈا ہمیں تب ملتا ہے اگر وقت پر ملتا تو ہم اس کی تیاری کرلیتے موقع پر کیا تیاری ہوسکتی ہے اکرم خان درانی نے کہا ک انجنڈے کا پرانا طریقہ رائج کیا جائے سپیکر نے کہا کہ دنیا آگے جارہی ہے آب کمپیوٹر سسٹم کو کیا جائے تو یہ افسوس کی بات ہے اس پر اتنا خراچہ آیا ہے کس طرح نیا سسٹم ختم کیا جائے ہم کو بلوچستان،پنجاب اور سندھ کی اسمبلیوں کی ویزٹ کرچکے ہیں اس طرح سسٹم چل رہا ہے صوبائی وزیر خوراک قلندر لودھی نے کہا کہ نگہت اورکزئی ہماری چھوٹی بہن ہے کہ سوال کیا ہے اور ایجنڈا کیا ہے یہ اپنے سوال سے ہٹ کر کہاں نکل جاتا ہے جو کرتی ہے اپنی مرضی سے سب کچھ کہہ دیتی ہے سپیکر نے کہا کہ سیکرٹریز اور اسسٹنٹ سیکرٹری کو ایوان میں حاضر ہونا چاہئے جو حاضر نہ ہو اس کیخلاف کارروائی کی جائیگی شگفتہ ملک کے سوال 4612 کو سپیکر نے کمیٹی کے حوالے کردیا،سپیکر نے اجلاس کو 13 جنوری بروز پیر تک ملتوی کردیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...