ماڈل کورٹ‘ اغوا‘ بداخلاقی کیس‘ مجرم کو 35سال قید‘1لاکھ جرمانے کی سزا

ماڈل کورٹ‘ اغوا‘ بداخلاقی کیس‘ مجرم کو 35سال قید‘1لاکھ جرمانے کی سزا

  



ملتان (خبر نگار خصو صی) ماڈل کورٹ برائے جینڈر بیس وائلنس کے جج حسن احمد نے لڑکی کو اغواء اور بداخلاقی کر نے کے مقدمہ میں ملوث ملزم کو مجموعی طور پر 35 سال قید اور ایک لاکھ جرمانہ ادا کرنے کی سزا سنائی ہے۔ فاضل عدالت میں پولیس تھانہ لوہاری گیٹ کے مطابق ملزم پیر عظیم کے خلاف 2018 میں مدعی نے مقدمہ درج کرایا جس میں الزام عائد کیا گیا کہ ملزم جو کہ دم کے ذریعے مریضوں کا(بقیہ نمبر31صفحہ12پر)

اعلاج کرتا تھا اسکے پاس اپنے والد عبدالوحید کو لیکر گئے جن کی طبیعت کچھ عرصہ سے خراب تھی اس لیے روحانی علاج کی خاطر ملزم سے رابطہ ہوا جس نے مظفر آباد مل پھاٹک کے پاس ڈیرہ بنارکھا تھا ملزم نے ایک روز اسکی بہن (س) کو دربار سے واپسی آتے ہوئے اغواء کرلیا جسے بعد میں بداخلاقی کا نشانہ بنایا گیا ملزم نے انتہا کا ظلم کیا ہے اس لیے عبرت ناک سزا دلوائی جائے۔ تاہم گزشتہ سماعت کے دوران عدالت نے تمام ثبوتوں اور گواہوں کی روشنی میں ملزم کو اغوا کی دفعہ کے تحت عمر قید اور زیادتی کے مقدمہ میں 10 سال قید اور ایک لاکھ جرمانہ ادا کرنے کی سزا سنائی ہے۔ اس موقع پر پراسیکیوشن کی جانب سے مقدمہ کی پیروی کرنے والے پراسیکوٹر چوہدری ضیاء الرحمن نے میڈیا کو بتایا کہ بچوں و خواتین کے ساتھ ہونیوالی زیادتی اور ظلم کے خلاف لڑنے کے لیے پراسیکیوشن برانچ متحرک ہے۔ اس کیس میں بھی مکمل شواہد کو بھرپور تیاری کے ساتھ عدالت کے روبرو پیش کیا گیا ہے۔ اس خصوصی عدالت کی وجہ سے وہ متاثرہ خاندان کو جلد انصاف دلوانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔

سزا

مزید : ملتان صفحہ آخر