سندھ میں گیس کی قلت،ذمہ دا ر وفا قی حکومت ہے، سعید غنی

سندھ میں گیس کی قلت،ذمہ دا ر وفا قی حکومت ہے، سعید غنی

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر)صو با ئی وزیر اطلا عا ت و محنت سعید غنی نے کہا ہے کہ اس با ت سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ پاکستان میں گیس کی ضروریات زیادہ ہے اور ضرورت کے مقابلے میں پیداوار45 فیصد ہے اگر ملک کی ضرورت پوری نہیں ہوتی تو سندھ کے بجائے دوسرے صوبوں کو گیس کم دی جائے ہمیں آئین کے مطابق سندھ کا حصہ ملنا چا ہئے حصہ ملنا چاہیئے۔ان خیا لا ت کا اظہا ر انہو ں نے ایکسپو سینٹر میں منعقدہ پا کستا ن لا ئف اسٹا ئل فر نیچر ایکسپو 2020کا افتتا ح اور میڈیا سے بات چیت کر تے ہو ئے کیا۔انہو ں نے کہا کہ میں ہر سال نما ئش میں آتا ہوں جہا ں مختلف اشیاء نمائش کے لیے رکھی جاتی ہیں اس نمائش میں بڑے نامور برانڈ کے فرنیچر شامل ہیں صوبہ سندھ اور خصوصا کراچی شہر میں امن کی صورتحال بہتر ہے اس نمائش کا انعقاد اس بات کا ثبوت ہے اس طرح کی تقریبا ت ہو نی چا ہئے اس سے پاکستان کا مثبت چہرہ دنیا کے سامنے پیش ہو گا اور اچھا پیغام ملے گا۔انہو ں نے کہا کہ وفا ق کی نالائق اور نااہل حکومت سے موجودگی سکون اور مسائل کے حل کی توقع نہ کی جائے۔انہو ں نے مزید کہا کہ گیس بحران پر وزیر اعلیٰ سندھ وفاق سے بھی بات چیت کرچکے ہیں ملک میں گیس کی پیداوار 70 فیصد سندھ سے ہوتی ہے اورگیس کی ضرورت پیداوار کے مطابق نہیں جب کہ آئین کے تحت ہمیں گیس کا حصہ نہیں مل رہا لہذا وزیر اعظم اس پر عمل کریں۔صو با ئی وزیر نے کہا کہ پی ٹی آئی کے احتجاج پر حیرت ہے اور اسے سوائے ڈرامے کے اور کچھ نہیں اگر ان کو احتجاج کرنا ہے تو انہیں اسلام آباد میں کرنا چاہیئے۔صو با ئی وزیر اطلاعات نے کہا کہ ملک میں بیروزگاری عر و ج پر ہے اور یہ ایک عوا م کروڑ نو کریو ں کی امید لگائے بیٹھے ہیں، وزیر اعظم نے خود کو داناثابت کرنے کے لیے ایک دن اعلان کیااور دوسرے دن یہ اعلان واپس لے لیا۔انہوں نے کہا کہ ہم نے عوا م کیلئے زراعت سمیت رو زگا ر کے دیگر راستے کھولے ہیں مگر وفا قی حکومت نے تمام راستے بند کیے اور زراعت سے وا بستہ افرا د کو بیروز گا ر کر دیا ہے۔انہو ں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم یہ کہیں کہ ایک دن روزگار مل گیا تو دوسرے روز پھر لوگ روزگار مانگیں گے اصل میں روزگار کے ذرائع پیدا کرنا ان کے بس کی با ت نہیں ہے۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ مولانا زرداری سے ملنے اور ان کی عیادت کے لیے آئے ہیں سیاست ضرور ہوگی مگر حکومت کا یہ ہی رویہ اور حال رہا تو اپوزیشن کے پاس جدوجہد کے سوا کو ئی راستہ نہیں ہو گا کراچی میں دیرپا امن ہے ایک وقت ایسا آئے گا کہ امن پولیس کے حوالے کردیا جائے گا۔ایک اور سوال کے جوا ب میں انہو ں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت کا پراپیگنڈہ بی آئی ایس پی جیسے بین الاقوامی منصوبے کو بدنام کرنے کے سوا کچھ نہیں دنیا نے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کی تعریف دنیا نے کی ہے 2018کے سروے میں اس کی تعریف کی گئی تھی اس وقت ثانیہ نشتر سروے بورڈ میں شامل تھی مگر رپورٹ جا ن بو جھ کر شائع نہیں ہوئی۔ انہو ں نے کہا کہ دو ڈھا ئی ہزار لوگوں کے خلاف کاروائی ہونی چاہیئے مگر 54 ہزار افراد کا کیا قصور تھا جنہیں معا شی طو ر پر کمزور کر دیاگیا۔صو با ئی وزیر نے کہا کہ اس وقت کچھ اور کہا گیا اب نادرا کا سروے کاکہ کر نئی بات کی جارہی ہے۔ ایک اور سوال پرانہو ں نے کہا کہ این آئی سی ایچ واقعہ پر وزیر اعلی نے انکوائری کی ہدایت کی ہے انکیوبیٹر کا واقعہ بڑا عجیب ہے اور سمجھ سے بالاتر ہے اس کی تحقیقات کی جائیں گی۔

مزید : صفحہ اول


loading...