یوکرائنی طیارہ گرانے کااعتراف،ایران کے سب سے بڑے اتحادی روس کا بھی سخت ردعمل آگیا

یوکرائنی طیارہ گرانے کااعتراف،ایران کے سب سے بڑے اتحادی روس کا بھی سخت ردعمل ...
یوکرائنی طیارہ گرانے کااعتراف،ایران کے سب سے بڑے اتحادی روس کا بھی سخت ردعمل آگیا

  



ماسکو(ڈیلی پاکستان آن لائن)ایران کی جانب سے یوکرائنی طیارہ تباہ کرنے کے اعتراف کے بعددنیا کے دیگر ممالک کے ساتھ  ایران کے سب سے بڑے اتحادی روس کی جانب سے بھی سخت ردعمل سامنے آیاہے۔روسی پارلیمنٹ کی کمیٹی برائے خارجہ امور نے کہا ہے کہ ایران کو چاہئے کہ وہ طیارے کی تباہی سے سبق سیکھے۔اور ذمہ داران کیخلاف کارروائی کرے۔

تفصیلات کے مطابق ایران نے اعتراف کیا ہے کہ اس نے یوکرائن کا طیارہ غیر ارادی طور پر مارگرایا۔ایران کے سرکاری ٹی وی کے مطابق ایک بیان میں ایرانی فوج کا کہنا تھا کہ ’یہ ایک انسانی غلطی کی بنا پر اس وقت ہوا جب طیارے نے ایران کے پاسدارانِ انقلاب سے منسلک حساس مقام کے قریب پرواز کی۔ اس حادثے میں ملوث افراد کا احتساب ہو گا۔‘

ایران کے وزیر خارجہ جواد ظریف کا سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کہنا تھا کہ ’یہ ایک افسوس ناک دن ہے۔ افواج کی اندرونی تحقیقات کے مطابق امریکی جنگی جنون کی وجہ سے اس بحران کے موقع پر یہ انسانی غلطی پیش آئی ہے۔ ہم تمام ممالک کے متاثرین اور ان کے خاندانوں سے معذرت خواہ ہیں اور ان سے تعزیت کرتے ہیں۔‘

ایران کے اعتراف کے بعد عالمی برادری کی جانب سے سخت ردعمل کااظہارکیاجارہاہے،یوکرائن نے مکمل تحقیقات اور ذمہ داران کو سزاد ینے کا مطالبہ کیا ہے

کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو نے بھی احتساب کرنے کا مطالبہ کردیا ہے۔

ایران کے سب سے بڑے اتحادی روس نے بھی معاملے پر سخت موقف اپنایاہے۔ روسی پارلیمنٹ کی کمیٹی برائے خارجہ امور کے چیئرمین کونسٹانٹنٹ کہتے ہیں کہ اگر تحقیقات میں ثابت ہوجائے کہ ایرانی فوج نے یہ جان بوجھ کر نہیں کیا تو معاملہ ختم کردینا چاہئے دوسری صورت میں تمام ذمہ داران کیخلاف کارروائی ہونی چاہئے۔

یاد رہے کہ ایران کے اعتراف سے قبل کینیڈا، امریکہ اور برطانیہ نے دعوی کیا تھا کہ انہیں متعدد ذرائع سے ملنے والی معلومات سے اشارہ ملتا ہے کہ یہ طیارہ ایران کے زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل کا نشانہ بنا۔ جبکہ کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے کہا تھا کہ ممکن ہے کہ یہ عمل ’غیرارادی طور پر ہوا‘۔

واضح رہے کہ یوکرائن کی بین الاقوامی فضائی کمپنی کی پرواز پی ایس 752 بدھ کو ایران کے دارالحکومت تہران سے پرواز کے چند ہی منٹ بعد گِر کر تباہ ہو گئی تھی۔ اس حادثے میں طیارے پر سوار مسافروں اور عملے کے اراکین سمیت تمام 176 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

یہ طیارہ تہران سے یوکرین کے دارالحکومت کیف جا رہا تھا اور پرواز کے محض آٹھ منٹ بعد ہی گر کر تباہ ہو گیا تھا۔ اس کے گرنے کی اطلاعات اسی وقت آئیں تھیں جب ایران جنرل قاسم سلیمانی کی ہلاکت کے بعد جوابی کارروائی میں عراق میں موجود امریکی فوجی اڈوں پر میزائل حملے کر رہا تھا۔

مزید : بین الاقوامی /عرب دنیا