” 4 روزہ ٹیسٹ سے کھلاڑیوں پر کام کا بوجھ کم نہیں ہو گا بلکہ بڑھے گا اور فاسٹ باﺅلرز بھی متاثر ہوں گے کیونکہ۔۔۔“ مصباح الحق نے پریشان کن دعویٰ کر دیا

” 4 روزہ ٹیسٹ سے کھلاڑیوں پر کام کا بوجھ کم نہیں ہو گا بلکہ بڑھے گا اور فاسٹ ...
” 4 روزہ ٹیسٹ سے کھلاڑیوں پر کام کا بوجھ کم نہیں ہو گا بلکہ بڑھے گا اور فاسٹ باﺅلرز بھی متاثر ہوں گے کیونکہ۔۔۔“ مصباح الحق نے پریشان کن دعویٰ کر دیا

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیف سلیکٹر و ہیڈ کوچ مصباح الحق نے کہا ہے کہ 4 روزہ ٹیسٹ میچ کے باعث کھلاڑیوں پر کام کا بوجھ کم نہیں ہو گا بلکہ بڑھ جائے گا اور فاسٹ باﺅلرز کیلئے بھی خاصی پریشان کن صورتحال پیدا ہو جائے گئی۔

تفصیلات کے مطابق مصباح الحق نے آئی سی سی کی جانب سے 4 روزہ ٹیسٹ میچ کی تجویز کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ اس سے کھلاڑیوں پر کام کا بوجھ بھی بڑھ جائے گا کیونکہ زیادہ تر ٹیمیں 4 باﺅلرز کیساتھ کھیلتی ہیں جو دن میں 15 سے 18اوورز ہی کرتے ہیں لیکن 4 روزہ ٹیسٹ میچ کی تجویز پر عملدرآمد کی صورت میں انہیں یومیہ 25اوورز تک کرنے پڑ سکتے ہیں جس سے 145، 150 کلومیٹر کی رفتار سے باﺅلنگ کرنے والوں کی رفتار میں یقینا فرق آئے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ شائقین کرکٹ مچل سٹارک، پیٹ کومنز، نسیم شاہ اور شاہین شاہ آفریدی کو تیز گیندیں کرتے دیکھنا چاہتے ہیں اور ان کی رفتار کم ہونے کی صورت میں انہیں مایوسی ہو گی جبکہ باﺅلرز بھی زیادہ اوورز کرانے کی وجہ سے انجری کا شکار ہو سکتے ہیں جس سے ان کا کیرئیر بھی متاثر ہو گا اور انہیں درمیان میں وقفے بھی لینا پڑیں گے، میری ذاتی رائے کے مطابق 5روزہ کرکٹ میں زیادہ نتائج سامنے آتے ہیں اور کھلاڑی بھی ان سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ حال ہی میں جنوبی افریقہ اور انگلینڈ کے سنسنی خیز میچ کا نتیجہ پانچویں دن اختتامی لمحات میں سامنے آیا، ویسٹ انڈیز میں میرا اور یونس خان کا آخری ٹیسٹ میچ بھی آخری لمحات میں ختم ہوا تھا،میچ جتنا کلوز ہو، سنسنی خیز اتنی ہی زیادہ بڑھتی ہے، عالمی کرکٹ منتظمین کو چار روزہ ٹیسٹ کے حوالے سے سوچ سمجھ کر فیصلہ کرنا ہوگا۔

مزید : کھیل


loading...