’خدا حافظ۔۔۔‘ انڈونیشین طیارے حادثے میں جاں بحق ہونے والی مسافر کا دلخراش آخری پیغام سامنے آگیا، جان کر کسی کی بھی آنکھیں نم ہوجائیں

’خدا حافظ۔۔۔‘ انڈونیشین طیارے حادثے میں جاں بحق ہونے والی مسافر کا دلخراش ...
’خدا حافظ۔۔۔‘ انڈونیشین طیارے حادثے میں جاں بحق ہونے والی مسافر کا دلخراش آخری پیغام سامنے آگیا، جان کر کسی کی بھی آنکھیں نم ہوجائیں
سورس: Instagram

  

جکارتہ(مانیٹرنگ ڈیسک)نڈونیشیاءمیں دو روز قبل فضائی کمپنی ’سری ویجایا ایئر‘ کا ایک جہاز حادثے کا شکار ہو کر سمندر برد ہو گیا جس میں 62مسافر اور عملے کے اراکین سوار تھے۔ اس بدقسمت حادثے کے متعلق المناک تفصیلات سامنے آ رہی ہیں۔میل آن لائن کے مطابق سری ویجایا ایئر کی پرواز 182نے ہفتے کے روز سوئیکارنو ہیٹا ایئرپورٹ سے اڑان بھری اور ٹیک آف کے چار منٹ بعد ہی جب پرواز سمندر کے اوپر پہنچ چکی تھی، یہ بوئنگ طیارہ اچانک 3300میٹر کی بلندی سے سیدھانیچے گرنا شروع ہوا اور صرف 60سیکنڈ میں آ کر سمندر کی سطح سے ٹکرا کر غرق ہو گیا۔

قریبی علاقوں میں موجود لوگوں کا کہنا ہے کہ انہوں نے دو دھماکوں کی آوازیں سنی تھیں۔ انڈونیشیاءکی نیشنل ٹرانسپورٹیشن سیفٹی کمیٹی کا کہنا ہے کہ طیارہ ممکنہ طور پر سمندر کی سطح سے ٹکرانے کے بعد دو ٹکڑے ہوا، کیونکہ اگر یہ فضاءمیں دھماکے سے تباہ ہوا ہوتا تو اس کے ٹکڑے سمندر میں زیادہ دور تک پھیلے ہوتے مگر ایسا نہیں ہے۔ اس کے ٹکڑے سمندر کی تہہ میں زیادہ دور تک نہیں پھیلے۔ رپورٹ کے مطابق غوطہ خور سمندر کی تہہ میں اس ہوائی جہاز کے ملبے کے پاس پہنچ گئے ہیں اور انہیں وہاں انسانی جسموں اور ان کے کپڑوں کے ٹکڑے بھی ملے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق حکام کی طرف سے جہاز میں سوار مسافروں کے لواحقین سے ان کے ڈی این اے وغیرہ مانگ لیے ہیں تاکہ جس مسافر کی لاش یا جسم کے ٹکڑے ملیں، اس کی شناخت کی جا سکے۔ اس بدقسمت طیارے میں سوار مسافروں کے آخری پیغامات اور سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی آخری پوسٹس بھی سامنے آ رہی ہیں۔

 مسافروں میں ایک خاتون ریتھ ونڈانیا بھی تھی جس نے اپنے تین کم عمر بچوں کے ساتھ اپنی ایک سیلفی لے کر فلائٹ کی روانگی سے کچھ ہی دیر قبل پوسٹ کی۔ سیلفی میں وہ چاروں مسکرا رہے ہوتے ہیں ۔ پوسٹ میں ریتھ لکھتی ہے کہ ”خداحافظ فیملی، اب ہم گھر جا رہے ہیں۔“ تاہم کسی کو کیا معلوم تھا کہ ریتھ اور اس کے معصوم بچوں کی یہ تصویر آخری تصویر ثابت ہونے جا رہی ہے اور وہ فیملی کے ساتھ چھٹیاں گزار کر واپس گھر کبھی نہیں پہنچ سکیں گے۔پینکا ویدیا نصرنتی نامی خاتون سکول ٹیچر بھی اس پرواز کے ذریعے گھر واپس جا رہی تھی۔ اس نے پرواز کی روانگی سے قبل اپنے شوہر رفیق یوسف الادریس کو واٹس ایپ پر بتایا کہ موسم کافی خراب ہے۔جواب میں اس کے شوہر نے کہاکہ تم دعا کرو۔ رفیق یوسف کا کہنا تھا کہ میں نے اسے مذاق کرتے ہوئے کہا کہ جب تم گھر پہنچو گی تو ہم مل کر سیٹے (Satay)کھائیں گے۔یہ اس کے ساتھ میری آخری گفتگو تھی۔

مزید :

بین الاقوامی -