امریکی کمپنی بلیک لسٹ ایکسائز ڈیپارٹمنٹ میں نمبر پلیٹوں کا بحران سنگین لاکھوں افراد پریشان

امریکی کمپنی بلیک لسٹ ایکسائز ڈیپارٹمنٹ میں نمبر پلیٹوں کا بحران سنگین ...

لاہور (نیوزرپورٹر) امریکی کمپنی کو بلیک لسٹ کرنے سے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ میں گاڑیوں کی نمبر پلیٹوں کا بحران پیدا ہوگیا ہے، نمبر پلیٹیں تیار نہ ہونے کی وجہ سے صوبے بھر میں 40سے زائد سیریز کے تحت رجسٹر ڈہونے والی 4لاکھ کاروں ، موٹرسائیکلوں اورکمرشل گاڑیوں کے مالکان کو پریشانی کا سامنا ہے، معلوم ہوا ہے کہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ میں ان دنوں نئی رجسٹرڈ ہونے والی گاڑیوں کی نمبر پلیٹوں کی دستیابی اہم ترین مسئلہ بن گئی ہے ، ذرائع کے مطابق صوبے بھر میں 40سے زائد رجسٹریشن سیریز کے تحت 4لاکھ سے زیادہ گاڑیوں کی رجسٹریشن اور نمبر پلیٹوں کی فیس وصول کیئے جانے کے با وجود ان گاڑیوں کو نمبر پلیٹیں مہیا نہیں کی گئیں ،جس سے ایسی گاڑیوں کے مالکان کو شدید پریشانی کا سامنا ہے ، معلوم ہوا ہے کہ نمبر پلیٹوں کی عدم دستیابی کا سب سے بڑا مسئلہ لاہور ، راولپنڈی، فیصل آباد، ملتان ، گوجرانوالہ، سرگودھا، بہاولپور،اور ساہیوال جیسے شہروں میں ہے،جہاں غیر نمونہ نمبر پلیٹوں کے استعمال پر ٹریفک پولیس ایسی گاڑیوں کے چالان کردیتی ہے اور گاڑی مالکان کے احتجاج اور وضاحت کے باوجود چالان کرنے سے باز نہیں آتی،یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ صرف لاہورمیں 2سے زیادہ رجسٹریشن سیریز کے تحت رجسٹرڈ ہونے والی کم و بیش 2لاکھ سے زیادہ گاڑیوں کی نمبر پلیٹیں عوام کو فراہم نہیں کی جاسکیں،ذرائع کے مطابق ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈٰیپارٹمنٹ نئی رجسٹریشن کے وقت کمپیوٹرائزڈ نمبر پلیٹ کے عوض موٹر سائیکل اور رکشہ وغیر ہ سے4 سو روپے او ر کار کے ساتھ ساتھ ہر قسم کی کمرشل و نان کمرشل گاڑی کے مالک سے ایڈوانس میں ایک ہزار روپے وصول کئے جاتے ہیںلیکن جولائی 2011سے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ کا امریکی کمپنی تھری ایم کے ساتھ معاہدہ ختم ہونے کے بعد سے صرف سٹاک میں موجود نمبر پلیٹیں ہی استعما ل کی جارہی ہیں اور نئی نمبر پلیٹں تیار نہیں کی جارہیں ،اس ضمن میں ڈائریکٹرجنرل ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کی سربراہی میں ایک کمیٹی قائم کی گئی، جس نے نمبر پلیٹوں کی تیاری کے لیئے پانچ مختلف کمپنیوں کو پری کوالیفائی کیا لیکن تھری ایم کی مداخلت پر یہ عمل روک دیا گیا،اور بلاآخر محکمے نے مئی 2012میں امریکی کمپنی تھری ایم کو بلیک لسٹ کردیا ، لیکن اس کے ساتھ ہی صوبے میں نمبر پلیٹوں کی تیاری کے حوالے سے بحران شدت اختیا ر کرگیا ہے،معلوم ہوا ہے کہ صرف لاہور میں LE-12,LEA-12, LEB-12,LEC-12, LEL-12.LED-12, LEE-12, LEO-12, LEP-12, LEQ-12,LER-12, LEV-12,LEW-12, LEI-12, LEZ-12و دیگر سیریز کے تحت رجسٹر ڈ ہونے والی گاڑیوں کو نمبر پلیٹیں فراہم نہیں کی گئیں ، اس سلسلے میں گفتگو کرتے ہوئے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ کے ترجمان کا کہناتھا کہ یہ بات درست ہے کہ صوبے میں نمبر پلیٹوں کی شارٹیج پیدا ہوئی ہے لیکن یہ مسئلہ زیادہ تر بڑے شہر وں میں ہے اور چھوٹے شہروں میں معاملات کنٹرول میں ہیں،ان کا کہناتھا کہ نئی کمپنی سے معاہدے کے بعد نمبر پلیٹوں کی کمی کا مسئلہ ختم ہوجائیگا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1