غیر قانونی جرگے انسانیت کے خلاف ہیں، وفاق اور صوبائی حکومتیں جرگے روکیں: سپریم کورٹ

غیر قانونی جرگے انسانیت کے خلاف ہیں، وفاق اور صوبائی حکومتیں جرگے روکیں: ...
غیر قانونی جرگے انسانیت کے خلاف ہیں، وفاق اور صوبائی حکومتیں جرگے روکیں: سپریم کورٹ

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ نے قرار دیا ہے کہ غیر قانونی جرگے انسانیت کے خلاف ہیں، وفاقی اور صوبائی حکومتیں غیر قانونی جرگیں روکیں اور اس ضمن میں عوام میں شعور پیدا کریں۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے راجن پور میں جرگہ کے خلاف ازخود نوٹس کیس کی سماعت کی۔ دوران سماعت ایس پی راجن پور نے عدالت کو بتایا کہ راجن پور میں نوجوان کو سزا جرگے کے حکم پر دی گئی تھی، چھ جولائی کو ایک لڑکے کو بے گناہی ثابت کرنے کیلئے پانی میں ڈبویا گیا اور لڑکے کو کچھ دیر پانی میں رہنا پڑا لیکن وقت سے پہلے پانی سے باہر آنے پر اسے موت کی سزا سنائی گئی۔ عدالت نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتیں غیر قانونی جرگے روکیں جبکہ قانون نافذ کرنے والے ادارے غیر قانونی جرگوں کے خلاف کارروائی کریں۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے ریمارکس دیئے کہ غیر قانونی جرگے انسانیت کے خلاف ہیں، یہ جرگے اس لئے ہوتے ہیں کہ پولیس اپنا کام نہیں کرتی۔ پولیس نے عدالت کو بتایا کہ جرگہ کے سربراہ سمیت تمام ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور ان کے خلاف کارروائی کی جا رہی ہے۔ عدالت نے کہا کہ غیر قانونی جرگوں کے خلاف عوام میں شعور اجاگر کیا جائے۔

مزید :

انسانی حقوق -اہم خبریں -