تاجکستان سے بجلی لینے کی منصوبہ بندی مکمل

تاجکستان سے بجلی لینے کی منصوبہ بندی مکمل
تاجکستان سے بجلی لینے کی منصوبہ بندی مکمل

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت نے توانائی پالیسی پر عملدرآمد شروع کرتے ہوئے تاجکستان سے بجلی کی درآمد کے لیے منصوبہ بندی مکمل کرلی ہے ۔ کا۔دستاویزات کے مطابق کاسا 1000 سے پاکستان کو ایک ہزار میگا واٹ بجلی حاصل ہو گی اور منصوبے سے بجلی صرف سال میں پانچ ماہ درآمد کی جا سکے گی۔ دستاویزات میں بتایا گیا ہے کہ تاجکستان سے درآمدی بجلی کا ٹیرف آٹھ روپے فی یونٹ مقرر کرنے کی تجویز کی گئی ہے۔ افغانستان پانچ روپے فی یونٹ راہداری وصول کرے گا اور منصوبے سے 2016 ءتک بجلی کی فراہمی شروع ہو جائے گی۔ دستاویزات کے مطابق چاروں ممالک اپنے اپنے علاقے میں ٹرانسمیشن لائن کی سرمایہ کاری خود کریں گے اورکاسا 1000 منصوبے پر بیس کروڑ ڈالر خرچ کرے گا جس میں سے بیس کروڑ ڈالر کا قرضہ ورلڈ بینک اور اسلامک بینک سے لیا جائے گا۔ تاجکستان سے بجلی درآمد کرنے کے لیے 750 کلومیٹر 500 کے وی ٹرانسمیشن لائن بچھائی جائے گی۔ 562 کلومیٹر ٹرانسمیشن لائن افغانستان سے گزرے گی۔ منصوبہ مجموعی طور پر ایک ارب ڈالر میں مکمل ہو گا۔

مزید :

بزنس -