چینی باشندوں کے گروہ کو انٹرنیٹ پربے تحاشہ رقم کمانے کے جرم میں گرفتار کرلیا گیا، کیا ایسا بھی کوئی جرم ہوسکتا ہے؟ انتہائی دلچسپ کہانی

چینی باشندوں کے گروہ کو انٹرنیٹ پربے تحاشہ رقم کمانے کے جرم میں گرفتار کرلیا ...
چینی باشندوں کے گروہ کو انٹرنیٹ پربے تحاشہ رقم کمانے کے جرم میں گرفتار کرلیا گیا، کیا ایسا بھی کوئی جرم ہوسکتا ہے؟ انتہائی دلچسپ کہانی

  

بیجنگ (نیوز ڈیسک) چینی حکام نے انٹرنیٹ پر مشکوک کا کام کرنے والے ایک گینگ کو بے تحاشہ کمائی کرنے کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔

اخبار ’’پیپلزڈیلی‘‘ کے مطابق یہ گینگ ایک نہایت منفرد قسم کا کام کرتا تھا جس کا مقصد مشہور شخصیات کا امیج بہتر بنانا تھا۔ گینگ کے 2000 سے زائد اراکین پورے چین میں پھیلے ہوئے تھے اور یہ اپنی گاہک شخصیات کے متعلق انٹرنیٹ پر آنے والی منفی پوسٹس کوڈیلیٹ کرتے تھے۔ اپنے گاہکوں کا امیج بہتر کرنے کیلئے یہ ان کے متعلق ہر منفی بات کو انٹرنیٹ سے ڈیلیٹ کرنے کی مہم میں مصروف رہتے تھے۔ یہ گینگ ہیکنگ کی بہترین صلاحیتوں کا مالک تھا اور مشہور ویب سائٹوں اور حتیٰ کہ سرکاری ویب سائٹوں سے بھی پوسٹس کو ڈیلیٹ کردیتا تھا۔ عام ویب سائٹ سے کسی کسٹمر کے خلاف ظاہر ہونے والی پوسٹ کو ڈیلیٹ کرنے کی فیس 2000 سے 4000 یوان جبکہ سرکاری ویب سائٹوں سے ہیکنگ کے ذریعے پوسٹ ڈیلیٹ کرنے کی فیس 10 ہزار یوان (تقریباً ڈیڑھ لاکھ پاکستانی روپے) لی جاتی تھی۔

چینی سپریم کورٹ کے 2013ء کے ایک فیصلے کے مطابق پوسٹ ڈیلیٹ کرنے کی خدمات کے عوض 20 ہزار یوان (تقریباً 3 لاکھ پاکستانی روپے) سے زائد منافع کمانا خلاف قانون ہے، جبکہ پولیس کے مطابق پکڑا جانے والا گینگ گزشتہ چار سال کے دوران 5 کروڑ یوان (تقریباً 80 کروڑ پاکستانی روپے) کماچکا ہے۔

ہیکنگ گینگ کے ارکان میں طالب علم، اساتذہ اور سرکاری ملازم بھی شامل تھے، جن میں سے 10 کو گرفتار کرلیا گیا ہے جبکہ باقی کی تلاش جاری ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس