چار سالوں میں 20لاکھ ہنرمند افراد بنانے کیلئے پرائیقیٹ سیکٹر کے ساتھ نظام وضع کرینگے ، راجہ اشفاق سرور

چار سالوں میں 20لاکھ ہنرمند افراد بنانے کیلئے پرائیقیٹ سیکٹر کے ساتھ نظام وضع ...

لاہور( کامرس ڈیسک)صوبائی وزیر محنت و انسانی وسائل راجہ اشفاق سرور نے کہا ہے کہ بے روزگاری کاخاتمہ دہشت گردی اور توانائی بحران سے زیادہ اہم اور توجہ طلب مسئلہ ہے۔ حکومت پنجاب گرؤتھ سٹریٹجی 2018کے تحت نوجوانوں کو جدید ہنر فراہم کر کے باعزت روزگار کی فراہمی اور صنعتی پیداوار میں اضافے کے لیے سکینڈری سکولز کے نصاب میں ٹیکنکل کورسز شامل کرنے کے لیے روڈ میپ کو حتمی شکل دے رہی ہے۔ انہوں نے یہ بات پی اینڈ ڈی آڈیٹوریم میں وزیر اعلی ، شہباز شریف کی طرف سے ٹیکنیکل تعلیم کے اداروں کی اپ گریڈیشن، نصاب میں ترمیم ،طلبا و طالبات نیز اساتذہ کی استعداد کار بہتر بنانے کے لئے قائم کی گئی کمیٹی کے دوسرے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی ۔ صوبائی وزیر خزانہ عاشہ غوث پاشا ،وزیر صنعت چوہدری محمد شفیق ،زکواۃ و عشر ملک ندیم کامران ، چیئر مین پی اینڈ ڈی عرفان الہی ، سیکرٹری لیبر عشرت علی ،سیکرٹری ایگری کلچر، چیئرپرسن ٹیوٹا عرفان قیصر شیخ ،چیف آپریٹنگ آفیسر پنجاب سکلڈ ڈویلپمنٹ فنڈاکبر بوسن، ایم ڈی پنجاب ووکیشنل ٹریننگ کونسل ساجد نصیر کے علاوہ McKinsey & Company ،ورلڈ بنک ، پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ اور دیگر متعلقہ اداروں کے نمائندوں نے اجلاس میں شرکت کی ۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ مختلف سٹیک ہولڈرز کی سفارشات کی روشنی میں ٹیکنیکل ٹریننگ اداروں کے لیے ایپکس(APEX) باڈی کا قیام عمل میں لائے جانے کی تجویز ہے جس سے پالیسی میکنگ ، کریکولم کی تشکیل نوخود مختار ٹریننگ سیکٹر قیام اور لیبر ایکسپورٹ میں اضافہ میں مدد ملے گی۔اجہ اشفاق سرور نے کہا کہ پرائیویٹ سیکٹر کے ساتھ پارٹنرشپ کے تحت ایک ایسا نظام واضع کیا جائے گا جس کے ذریعے اگلے چار سال میں 20 لاکھ نوجوانوں پر مشتمل ہنر مند افرادی قوت کی تشکیل ممکن بنائی جاسکے۔ انہوں نے کہا اس مقصد کے لئے صوبہ پنجاب کے پبلک سیکٹر میں قائم فنی تربیت کے اداروں کے نصاب ، تربیتی طریقہ کار اور انتظامی امور کی اپ گریڈیشن کے لئے انٹر نیشنل کنسلٹنٹ کی خدمات حاصل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔

وزیر صنعت چوہدری محمد شفیق نے کہا کہ صنعتی و معاشی ترقی کے لئے ڈیمانڈ کے مطابق ہنر مند افرادی قوت ،مقابلے کے رحجان پر مبنی جدید فنی تربیت کی فراہمی اور سنٹرل آف ایکسیلینس کے قیام کے علاوہ ہنر مند خواتین کی تعداد میں اضافے ، پالیسی میکنگ اور مقامی و بین الاقوامی مارکیٹ میں پاکستانی ہنر مند افراد کی کھپت میں اضافے کے لئے سکلڈ ڈویلپمنٹ سیکٹوریل پلان 2015-18 متعارف کروایا گیا ہے ۔وزیر خزانہ عائشہ غوث پاشا نے کہا کہ صوبہ پنجاب کے تمام ادارے جو اپنی سطح پرٹیکنیکل ٹریننگ فراہم کررہے ہیں کو بھی اس پروگرام کے دائرہ کار میں لایا جارہاہے ۔ وزیر زکوۃ و عشر ملک ندیم کامران نے کہا کہ روزگار کی فراہمی کے لیے اس منصوبے کی اہمیت کے پیش نظر تمام اداروں کے سیکرٹری کمیٹی کی میٹنگ میں حاضری یقینی بنائیں تاکہ حتمی رپورٹ مرتب کرنے سے پہلے تمام محکموں کا نقطہ نظر واضح ہوسکے۔ کمیٹی کے اغراض و مقاصد میں موجودہ فنی تربیت کے اداروں کے نصاب میں ان نقائص اور ضروری امور کی نشاندہی ہے جن کو بین الاقوامی مشاورتی فرم کے سامنے پیش کر کے دور کیا جا سکتا ہے ۔ چیئر مین پی اینڈ ڈی عرفان الہی نے کہا کہ فنی تربیت کے اداروں کی خود مختار ایگزامینیشن باڈی کا قیام ،کنسلٹنٹ فرم کے ذریعے ٹیکنیکل معاونت ، پرائیویٹ سیکٹر کے تعاون سے تربیت حاصل کرنے والوں کے لئے ملازمت کی فراہمی کے علاوہ لیبر مارکیٹ مارکیٹ انفارمیشن سسٹم کو فعال کر کے ایسا موثر میکانزم وضع کیا جائے گا ۔ شرکاء نے تربیتی اداروں کی بہتری کے لئے مختلف تجاویز اور سفارشات پیش کیں ۔

مزید : کامرس