سانحہ صفورا گوٹھ کے ملزم کے جوائنٹ انکوائری کمیشن کے سامنے سنسنی خیز انکشافات

سانحہ صفورا گوٹھ کے ملزم کے جوائنٹ انکوائری کمیشن کے سامنے سنسنی خیز ...

کراچی (اے این این)سانحہ صفورا گوٹھ کے گرفتارملزم سعد عزیز کے جوائنٹ انکوائری کمیشن کے سامنے سنسنی خیز انکشافات ،جے آئی ٹی رپورٹ میں ملزم کو انتہائی خطرناک مجرم ،تعلق القاعدہ اور داعش بتایا گیا ،ملزم کا ڈاکٹرسبین محمود کو قتل کرنے کا انکشاف ۔ نجی ٹی وی کی کے مطابق سانحہ صفورا کے اہم ملزم سعد عزیز کی جے آئی ٹی رپورٹ اور تصویر سامنے آگئی، رپورٹ میں ملزم کو انتہائی خطرناک مجرم کہا گیا ہے۔ ملزم نے جے آئی ٹی کے روبرو سنسنی خیز انکشافات بھی کیے ہیں۔سانحہ صفورا کے اہم ملزم سعد عزیز سے تفتیشی اداروں کی تحقیقات مکمل کرلی۔ حساس اداروں سمیت چھ اداروں کے افسران پرمشتمل جے آئی ٹی نے رپورٹ مرتب کرلی۔ رپورٹ میں ملزم سعد عزیز کو انتہائی خطرناک مجرم اور تعلق القاعدہ اور داعش سے بتایا گیا ہے۔ملزم نے جے آئی ٹی کے روبرو سنسنی خیز انکشافات کیے۔ ملزم کمیشن کو بتایا کہ اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے بعد القاعدہ کا زور ٹوٹنے لگا تھا داعش کے اعلان خلافت کے بعد اس کا رجحان داعش کی جانب ہونے لگا۔ پاکستان میں داعش کا پہلا امیر حافظ سعید خان کو بنایا گیا تو ملزم نے عبداللہ یوسف نامی شخص کے ذریعے داعش میں شامل ہونے کی کوشش کی اور مختلف علاقوں میں داعش کی وال چاکنگ بھی کی گئی۔سعد عزیز نے مقامی فضائی کمپنی کے ملازم کے ذریعے فنڈنگ کے کام کاانکشاف بھی کیا ملزم نے ڈاکٹر سبین محمود کو لال مسجد کے مولانا عبدالعزیز کے خلاف بیان پر قتل کرنے کاانکشاف کیا۔ جب کہ ڈاکٹرسبین محمود سے ملاقات کیلئے آنے والے غیر ملکی کو بھی قتل کرنے کا منصوبہ بنا رکھا تھا۔سانحہ صفورا گوٹھ میں ملزم نے دیگر ساتھیوں کے نام بھی بتائے اور ان کی جانب سے کی گئی کارروائی کی تفصیلات سے بھی جے آئی ٹی کو آگاہ کیا۔ ملزم نے جے آئی ٹی کو بتایا کہ صفورا گوٹھ واقعہ سے قبل انہیں ایک ویب سائٹ پر یمن کی ویڈیو دکھائی گئی جس میں حوثی باغیوں کی جانب سے خواتین اور بچوں کو قتل کرتے دکھایا گیا۔

مزید : صفحہ اول