پشاور ،گرفتار صوبائی وزیر 13روزہ جسمانی ریمانڈ پر احتساب کمیشن کے حوالے

پشاور ،گرفتار صوبائی وزیر 13روزہ جسمانی ریمانڈ پر احتساب کمیشن کے حوالے

 پشاور(اے این این)پشاور کی احتساب عدالت نے کرپشن کے الزامات میں گرفتار خیبرپختونخوا کے صوبائی وزیرمعدنیات ضیااللہ آفریدی کو 13 روزہ جسمانی ریمانڈ پر احستاب کمیشن کے حوالے کردیا۔جمعہ کو صوبائی وزیرضیااللہ آفریدی کو احتساب کمیشن کے جج سبحان شیر کی عدالت میں پیش کیا گیا۔ اس موقع پر احستاب کمیشن کے لا افسران نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ صوبائی وزیر فنڈز میں خرد برد سمیت تقرریوں اور تبادلوں میں اقربا پروری میں ملوث ہیں اس لئے ان سے تفتیش کے لئے جسمانی ریمانڈ پر حوالے کیا جائے۔ احتساب عدالت نے احستاب کمیشن کی درخواست منظور کرتے ہوئے صوبائی وزیرمعدنیات ضیااللہ آفریدی کو 13 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کردیا۔واضح رہے کہ احتساب کمیشن نے گزشتہ روز ضیااللہ آفریدی کو کرپشن الزامات سامنے آنے پر حراست میں لیا تھا۔سماعت کے موقع پر احتساب کمیشن عدالت کے باہر صوبائی وزیر معدنیات ضیاللہ آفریدی کے حمایتیوں اور پولیس میں ہاتھا پائی ، صوبائی وزیر کے حمایتوں نے شدید نعرے بازی کی ۔ صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے صوبائی وزیر نے کہاکہ مجھے گرفتار کرانے میں وزیراعلیٰ پرویز خٹک ملوث ہیں ۔ موجودہ کمیشن احستاب کیلئے نہیں بنایا گیا یہ پرویزکمیشن ہے۔ قومی وطن پارٹی حکومت کی اتحادی تھی اس پر کرپشن کے الزامات لگے تھے اب دوبارہ قومی وطن پارٹی کو حکومت میں شامل کیا جا رہاہے ۔ مجھ پر قومی پارٹی کو سپورٹ کرنے پر دباؤ ڈالا جا رہاتھا انکار کرنے پر میرے خلاف انتقامی کارروائی کی گئی ہے ۔

مزید : صفحہ اول