سیاسی قیادت کو عدالتی فیصلوں سے باہر کرنا ملکی مطاد میں نہیں:رانا مشہود احمد

سیاسی قیادت کو عدالتی فیصلوں سے باہر کرنا ملکی مطاد میں نہیں:رانا مشہود احمد

کراچی (اسٹاف رپورٹر) پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا مشہود احمد نے کہا ہے کہ سیاسی قیادت کوعدالتی فیصلوں سے سیاسی میدان سے باہر کرنا ملکی مفاد میں نہیں ہے۔ مریم کو صرف اس بات پر سات سال سزا دی جاری ہے کہ وہ ڈکٹیٹ کرنے والوں پر تنقید کرتی ہے ۔ماورائے عدالت کام کرنے والے کو بھگتنا پڑے گا۔ پی ٹی آئی کے لوگوں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے آپ کے پر جلتے ہیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی کے مقامی ہوٹل میں الیکشن 2018کی تیاریوں کے حوالے سے منعقدہ اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر مسلم لیگ (ن)سندھ کے صدر شاہ محمد شاہ ،جنرل سیکرٹری سینیٹر سلیم ضیا اور دیگر بھی موجود تھے ۔رانا مشہود نے کہا کہ ہمارے کارکنوں کو شہید کیا جارہا ہے ۔ چند دن قبل جانثار کارکن عابد تنولی کو شہید کیا گیا ۔ 2 دن قبل شاہ لطیف ٹاون میں نثار آرائیں کو گولیاں مار کر قتل کیا گیا ۔ہمارے کارکنوں کو قتل کرکے ہمیں کیا پیغام دینے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ مخالفین اوچھے ہتھکنڈوں سے پی ایم ایل ن کی بڑھتی مقبولیت ختم نہیں ہو سکتی۔ اس ملک کے روشن مستقبل کی ضامن مسلم لیگ (ن) ہے ۔اس الیکشن میں 2013سے زیادہ اور بہتر نتائج دیں گے ۔انہوں نے کہا کہ سندھ میں ہمارے بغیر کوئی حکومت نہیں بن سکتی۔ رانا مشہود نے کہا کہ مریم کو صرف اس بات پر سات سال سزا دی جاری ہے کہ وہ ڈکٹیٹ کرنے والوں پر تنقید کرتی ہے ماورائے عدالت کام کرنے والے کو بھگتنا پڑے گا ۔ پی ٹی آئی کے لوگوں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے آپ کے پر جلتے ہیں۔ مریم نواز پورے ملک کی بیٹی ہے۔ مریم نواز آئین و جمہوریت کی بقا کے لیے اپنے والد کے ہمراہ وطن واپس آرہی ہیں۔13 جولائی کو پاکستان کی تاریخ کا سب سے بڑا استقبال ہوگا ۔ عوام کا ٹھاٹھے مارتا سمندر نواز شریف کے استقبال کا فیصلہ کرے گا ۔ حکومت 13 جولائی کو استقبال میں رکاوٹ ڈالنے کی کوشش نہ کرے۔انہوں نے کہا کہ پانامہ میں نواز شریف کا نام بھی نہیں تھا ۔ پانامہ کیس میں پاکستان تحریک انصاف کے لوگوں کے نام تھے ۔ قانون کی دھجیاں اڑانے والے افسران کے لیے ایک سیل بنایا ہے تا کہ انکا احتساب کیا جا سکے ۔وہ آمر جو پاکستان میں مکے لہرااتا تھا آج ملک میں داخل نہیں ہوسکتا۔ وہ جب بھی وطن آیا اس پر آرٹیکل 6 کے تحت مقدمہ چلے گا ۔انہوں نے کہا کہ سیاسی قیادت کے خلاف عدالتی فیصلوں سے انہیں سیاسی میدان سے باہر کرنا ملکی مفاد میں نہیں ہے ۔ 25 جولائی کے بعد کے پاکستان کے لیے تمام سیاسی جماعتوں سے رابطے میں ہیں۔25جولائی کو عوام کا غصہ نکلے گا اور شہباز شریف وزیراعظم بنیں گے ۔جب جماعتیں بڑی ہوتی ہیں تو اتحاد ہوتے ہیں اور سب کو ساتھ لے کر چلا جاتا ہے ۔ خدا کے واسطے زبردستی کے بجائے عوام کو فیصلے کرنے دیئے جائیں ۔عدالتی فیصلوں کے ذریعے قیادتوں کو مائنس کرنا درست نہیں ہے ۔فرد واحد کے فیصلے کے ہمیشہ مخالف ہیں ۔فیصلے پارلیمنٹ کو کرنے چاہئیں ۔ہم تکلیف کے باوجود بچوں کی طرح حرکت نہیں کرتے ہیں ۔ہم میاں صاحب اور بی بی کے چارٹر کی حمایت کرتے ہیں ۔اس موقع پر مسلم لیگ (ن)سندھ کے صدر شاہ محمد شاہ نے کہا کہ مسائل کے باجود جدوجہد جاری ہے اور الیکشن میں بہتر کارکردگی سامنے آئیگی ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان میں دوہرا نظام ہے ۔ فیصلے لکھے ہوئے کیے جارہے ہیں ۔کمرمیں درد کا بہانہ بنانے والا دبئی میں بیٹھا ریٹائرڈ جنرل ڈانس میں مصروف ہے۔ انہیں کیوں نہیں بلایا جارہا۔ بہت سے سیاسی معاملات میں تیزی سے تبدیلی آرہی ہے ۔آج ہم نے کے کراچی کے امیدواروں کے ہمراہ اجلاس طلب کیا تھا، میں شہر قائد میں انتخابی مہم کا جائزہ لیا ہے ۔ شہباز شریف کراچی کے حلقے 249 سے انتخابات میں حصہ لے رہے ہیں ۔شہر میں مسلم لیگ (ن)کی انتخابی مہم زور و شور سے جاری ہے ۔انہوں نے کہا کہ 13 جولائی کو ملکی تاریخ بدلنے والی ہے ۔پورا پاکستان لاہور میں قائد کا پرامن استقبال کرے گا ۔جمہوریت کی بقا اور اسکا جھنڈا بلند کرنے والے نواز شریف کے ساتھ ہیں ۔شاہ محمد شاہ نے کہا کہ اب کوئی مائنس ون کا فارمولا نہیں چلے گا ۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...