پاکستانی لڑکے نے معروف شاپنگ ویب سائٹ ”دراز“ سے ایک لاکھ روپے مالیت کا فون S9 خریدا لیکن جب کھول کر دیکھا تو اندر سے ایسی چیز نکل آئی کہ پیروں تلے زمین ہی نکل گئی، دیکھ کر آپ بھی گھبرا جائیں گے

پاکستانی لڑکے نے معروف شاپنگ ویب سائٹ ”دراز“ سے ایک لاکھ روپے مالیت کا فون S9 ...
پاکستانی لڑکے نے معروف شاپنگ ویب سائٹ ”دراز“ سے ایک لاکھ روپے مالیت کا فون S9 خریدا لیکن جب کھول کر دیکھا تو اندر سے ایسی چیز نکل آئی کہ پیروں تلے زمین ہی نکل گئی، دیکھ کر آپ بھی گھبرا جائیں گے

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان میں ای کامرس انڈسٹری میں گزشتہ چند سالوں کے دوران بہت ترقی ہوئی ہے اور آن لائن شاپنگ کے رجحان میں بے حد اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔ ایک جانب لاکھوں پاکستانی اس سہولت سے فائدہ اٹھانے میں مصروف ہیں تو اس کیساتھ ہی اشیاءکی کوالٹی کے حوالے سے بھی کئی خدشات سے جنم لیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔سام سنگ نے فلیگ شپ فونز کی قیمتوں میں ناقابل یقین کمی کر دی، کتنی کمی کی گئی اور نئی قیمتیں کیا ہیں؟ جان کر آپ ابھی خریدنے مارکیٹ جا پہنچیں گے 

عموماً یہ خیال کیا جاتا ہے کہ اس کامرس انڈسٹری میں معروف ویب سائٹس سے اشیاءخریدنا محفوظ ہے اور کوالٹی بھی بہترین ہوتی ہے مگر ایک پاکستانی لڑکے علی خان کیساتھ ایسا ’ہاتھ‘ ہوا ہے کہ جان کر آپ بھی گھبرا جائیں گے۔

علی خان نے سام سنگ کا نیا فلیگ شپ فون گلیکسی S9 خریدنے کا فیصلہ کیا اور سوچا کہ مارکیٹ میں جانے کے بجائے آن لائن شاپنگ کی سہولت استعمال کی جائے اور اس مقصد کیلئے پاکستان کی معروف ویب سائٹ ”دراز‘ کا انتخاب کیا جو اسے کافی مہنگا پڑ گیا اور ایک لاکھ روپے کے بدلے خالی ڈبہ ملا تو پیروں تلے زمین ہی نکل گئی۔

علی خان نے فیس بک پر جاری اپنے پیغام میں لکھا ” میں نے دراز پر ایک لاکھ روپے مالیت کا S9 خریدا اور مجھے صرف خالی ڈبہ بھیج دیا گیا جو کھولنے کے بعد دوبارہ سیل کیا گیا تھا۔ جب پارسل آیا اور میں نے اسے کھولا تو میرے اوسان خطاءہو گئے۔ میں نے دراز والوں کو مسئلہ حل کرنے کیلئے فون کیا اور تقریباً دو ہفتے کی ’تحقیقات‘ کے بعد بتایا گیا کہ ان کے ریکارڈ کے مطابق میرا پارسل بحفاظت بھیجا گیا تھا۔

اس کے بعد میں نے ’وائے موبائل‘ والوں سے رابطہ کیا تو انہوں نے مجھے ایک ویڈیو بھیجی جس میں میرا پارسل پیک کرتے ہوئے دکھایا گیا لہٰذا یا تو ٹی سی ایل والوں نے موبائل چرایا لیکن مجھے اس حوالے سے بھی شک ہے کیونکہ انہیں معلوم نہیں کہ پارسل میں کون سا موبائل تھا، اس لئے یقینا دراز کے وئیرہاﺅس میں یہ سب کچھ ہوا لیکن جو بھی ہے دونوں صورتوں میں مجھے تکلیف سے گزرنا پڑ رہا ہے کیونکہ دراز نے موبائل کی حفاظت کو یقینی نہیں بنایا ، دراز لوگوں کو لوٹنا چھوڑ دے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /سائنس اور ٹیکنالوجی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...