خاتون سمیت 3افراد قتل، حادثات میں 8جاں بحق، ایک کی خودکشی

  خاتون سمیت 3افراد قتل، حادثات میں 8جاں بحق، ایک کی خودکشی

  

ملتان،ہارون آباد،رحیم یار خان،جھوک اترا، راجن پور،حاصل پور،محسنوال(خصو صی رپورٹر، نما ئندگان پاکستان)خاتون سمیت 3افراد کو قتل کر دیا گیا۔حادثات میں 8افراد جاں بحق ہوگئے اور ایک نے خود کشی کر لی۔تفصیل کے مطابق رنگیل پور کے قریب تیزرفتار کی ٹکر سے نامعلوم موٹرسائیکل سوار شدید زخمی ہوگیا جو زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے موقع پر زندگی کی بازی ہار گیا جبکہ کار ڈرائیور موقع سے رفوچکر (بقیہ نمبر43صفحہ7پر)

ہوگیا،واقع کی اطلاع پر متعلقہ پولیس نے جائے وقوعہ پر پہنچ کر نامعلوم شخص کی نعش تحویل میں لیکر نشتر ہسپتال کے سرد خانے منتقل کردی،پولیس کے مطابق جاں بحق ہونے والے کی تاحال شناخت نہ ہوسکی ہے جس کے ورثا کی تلاش شروع کرتے ہوئے کار ڈرائیور کے خلاف کارروائی شروع کردی ہے۔جبکہ ہارو ن آباد کے نواحی گاؤں 23/24تھر ی آر (لالیکا) کے رہائشی نور علی کی بیٹی مسماۃ عابدہ بی بی کی شادی 10سال قبل نواحی بستی جھلاراں کے رہائشی محمد سلیم نامی شخص کیساتھ وٹہ سٹہ میں ہوئی، جس کے بطن سے پانچ بچے دو بیٹے اور تین بیٹیاں پیدا ہوئیں جوکہ زندہ حیات ہیں، خاوند محمد سلیم اپنی بیوی عابدہ بی بی کو ہمیشہ شک کی نگاہ سے دیکھتا جس پر روزانہ دونوں میں لڑائی جھگڑا معمول بن چکا تھا، وقوعہ کے دو روز قبل اسی بات پر دونو ں میں میاں بیوی میں لڑائی جھگڑا ہوا جس پر عابدہ بی بی کے بھائی محمد یاسین علاقہ دیہہ کے محمد حسین اور محمد خالد کے ہمراہ بستی جھلاراں اپنی بہن کے گھر آئے اور دونوں میاں بیوی میں لڑائی ختم کرنے اور صلح کرانے کی کوشش کی جس پرخاوند محمد سلیم راضی نہ ہوا، گزشتہ رات گئے دونوں میاں بیوی کے درمیان شدید لڑائی جھگڑا ہوا، جس پر خاوند محمد سلیم نے اپنی بیوی عابدہ بی بی کو شدید تشدد کا نشانہ بنایا اور 30بور پسٹل سے فائر کر کے اپنی بیوی عابدہ بی بی کو قتل کردیاا ور موقع سے فرار ہو گیا۔ اطلاع پر مقامی پولیس نے موقع پر پہنچ کر لاش کو قبضہ میں لیکر پورسٹمارٹم کیلئے ہسپتال منتقل کردی ا ور مقتولہ عابدہ بی بی کے بھائی محمد یاسین کی مدعیت میں مقدمہ قتل درج کرکے تفتیش شروع کردی ہے۔ ادھر خانبیلہ کا رہائشی 35سالہ محمدجاوید جوکہ اپنی موٹرسائیکل پر سوار ہوکر قومی شاہراہ پر جارہا تھا کہ خان بیلہ کے کچھ ہی فاصلے پر چانجنی چوک کے نزدیک نامعلوم ملزمان نے فائرمار دیا جس کے نتیجہ میں وہ زخمی ہوکر سڑک پر جاگرا اور زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے موقع پر ہی دم توڑ گیا جبکہ ملزمان فرار ہوگئے۔ اطلاع پاکر پولیس نے موقع پر پہنچ کر محمدجاوید کی نعش تحویل میں لے کر پوسٹ مارٹم کیلئے ہسپتال منتقل کرتے ہوئے تحقیقات شروع کردی۔جبکہ تھانہ ظاہر پیر کی حدود موضع چانڈیہ کے رہائشی گامن خان نے پولیس کو اپنی شکایت میں بیان کیا کہ اس کے قریبی رشتہ دار اکبر علی کے ساتھ کئی عرصہ سے زمین کا تنازعہ چلاآرہا تھا‘ 6جولائی کو اس کا 24سالہ بیٹا مجیب خان زمین پر کام کررہا تھا کہ اسی دوران ملزم اکبر علی اپنے دونامعلوم مسلح ساتھیوں کے ہمراہ آگیا اور اس کے بیٹے پر حملہ کردیا۔ بہیمانہ تشدد کا نشانہ بناتے ہوئے اسے سر میں رپیٹر کا بٹ مار کر شدیدزخمی کردیا۔ واویلا ہونے پر ملزمان موقع سے فرار ہوگئے۔ زخمی مجیب خان کو ورثاء نے طبی امداد کیلئے شیخ زاید ہسپتال منتقل کیا جہاں تین روز تک طبی امداد کے باوجود مجیب خان سر پر لگنے والی گہری ضرب کے باعث جانبر نہ ہوپایا اور زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔ اطلاع پر پولیس نے مقتول کی نعش تحویل میں لے کر پوسٹ مارٹم کیلئے منتقل کردی اور والد گامن خان کی رپورٹ پر پولیس نے قتل کا مقدمہ درج کرکے کارروائی شروع کردی۔ادھر جھوک اترا کے بدقسمت خاندان کو جام پور کے نزدیک حادثہ.غلام حبیب ولد یار محمدبعمر55سال سکنہ موضع پنڑ بستی لسوڑی والا اپنی فیملی کے ہمراہ موٹرسائیکل پہ جامپور سے واپس آرہے تھے کہ اڈہ طلائی والا کے نزدیک تیزرفتار آئل ٹینکرنے روند ڈالاجس کے نتیجہ میں حبیب ولدیار محمد چانڈیہ.سلمیٰ مائی بعمر 35سال زوجہ بلال.شیراز بعمر5سال ولد بلال چانڈیہ موقع پر جانبحق ہوگئے.جبکہ متوفی حبیب کی اہلیہ نذیرمائی شدید زخمی ہوگئی جنہیں ریسکیو1122کے ذریعے جام پور تحصیل ہسپتال منتقل کردیا گیا ہلاک ہونے والوں کی نعشیں وارثان کے حوالے کردی گئیں جنکی رات گئے نماز جنازہ ادا کی جائے گی۔ جبکہ حاصلپورتھانہ سٹی کی حدود گجراں والا ڈیرہ میں تالاب میں سے 10سالہ بچے کی لاش برآمد۔ریسکیو ذرائع۔فلک شیر نامی بچے کو ورثاء ڈھونڈ رہے تھے کہ لاش ملی بچے کا ذہنی توازن درست نہ تھا۔ریسکیو۔واقعہ کی اطلاع ملنے ریسکیو اہلکار وں نے بچے کی لاش کو تالاب سے نکالا اس افسوسناک خبر کے بعد پورے علاقے میں خوف وہراس پھیل گیا بچے کی لاش کو.ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔ادھر نیشنل ہائی وے پر موسٰی ورک کے قریب موٹر سائیکل سلپ ہونے کے بعد ٹریکٹر ٹرالی کے نیچے آکر 13 سالہ لڑکی جاں بحق ہوگئی جبکہ حادثے میں 16سالہ سعد شدید زخمی ہوگیا ریسکیو 1122 نے زخمی کو ٹی ایچ کیو ہسپتال منتقل کردیا۔ جبکہ خانبیلہ کا رہائشی 3سالہ کمسن شہبازعلی جوکہ مسافر وین اور ٹرک کے درمیان ہونیوالے تصادم میں شدید زخمی ہوگیا اور ڈہرکی کارہائشی 28سالہ عبدالشکور جوکہ اپنی موٹرسائیکل پر سوار ہوکر کام کے سلسلہ میں جارہا تھا کہ پیچھے سے آنیوالی تیزرفتار مسافر بس نے کراس کرتے ہوئے سائیڈ ماردی جس کے نتیجہ میں وہ سڑک پر گرکر شدید زخمی ہوگیا۔ ورثاء نے زخمی ہونیوالے دونوں افراد کو شیخ زاید ہسپتال رحیم یارخان منتقل کیا جہاں طبی امداد کے باوجود شہبازعلی اور عبدالشکور جانبر نہ ہوپائے اور دم توڑ گئے۔ادھر گھریلو جھگڑوں سے دلبرداشتہ ہوکر 25سالہ نوجوان نے گندم میں رکھنے والی گولیاں کھا کر خودکشی کرلی‘ دو خواتین سمیت چار افراد کا اقدام خودکشی۔ تفصیل کے مطابق تحصیل صادق آباد کے رہائشی 25سالہ نوجوان شمن طفیل نے آئے روز کے گھریلو جھگڑوں سے دلبرداشتہ ہوکر بھاری مقدار میں گندم میں رکھنے والی گولیاں کھالیں‘ حالت تشویشناک ہونے پر ورثاء نے شیخ زاید ہسپتال منتقل کیا جہاں طبی امداد کے باوجود شمن طفیل جسم میں زہرپھیل جانے کے باعث جانبر نہ ہوپایا اور دم توڑ گیا۔ جبکہ اقدام خودکشی کرنے والے 4افراد جن میں محلہ قاضاں کی 18سالہ امینہ بی بی‘ رکن پور کی 25سالہ حمیدمائی‘ راجن پور کا 18سالہ رانجھا اور رکن پور کا رہائشی 19سالہ جاوید احمد کو ہسپتال میں طبی امداد فراہم کی جارہی ہے۔

حادثات

مزید :

ملتان صفحہ آخر -