ہائیکورٹ بار کا 4سینئر ججوں  کی سپریم کورٹ میں تعیناتی  نظرانداز کرنے پر تحفظات کا اظہار 

ہائیکورٹ بار کا 4سینئر ججوں  کی سپریم کورٹ میں تعیناتی  نظرانداز کرنے پر ...

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)سندھ ہائی کورٹ بار کے بعد لاہورہائی کورٹ بار نے بھی سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سمیت چارسینئر ججوں کو سپریم کورٹ میں تعیناتی کے لئے نظر انداز کرنے پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے چیف جسٹس پاکستان مسٹر جسٹس گلزا احمد اورجوڈیشل کمشن کے دیگر ارکان کو خط لکھ دیاہے،اس سلسلے میں لاہورہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر محمد مقصود بٹر کے خط میں کہا گیاہے کہ لاہورہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن اس موقف کی مکمل تائید کرتی ہے جو سپریم کورٹ میں تقرریوں کے حوالے سے سندھ ہائی کورٹ بارایسوسی ایشن نے اختیارکیاہے،مقصود بٹر کاکہناہے کہ لاہورہائی کورٹ بار بلوچستان ہائی کورٹ کے چیف جسٹس جمال خان مندوخیل کی سپریم کورٹ میں بطور جج تعیناتی کی تجویز کی حمایت کرتی ہے لیکن ہمیں سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سمیت 4سینئر ججوں کو نظر انداز کرکے پانچویں نمبر کے جج محمد علی مظہر کو سپریم کورٹ کا جج تعینات کرنے کی تجویز پر تحفظات ہیں،خط میں جوڈیشل کمشن کے سربراہ چیف جسٹس پاکستان اور ارکان سے استدعاکی گئی ہے کہ سپریم کورٹ میں ججوں کے تقررکے لئے سنیارٹی کے اصولوں کو نظر انداز نہ کیا جائے۔

ہائیکورٹ بار

مزید :

صفحہ آخر -