فون ٹیپنگ کے معاملے میں عمران خان کیا کہتے تھے ۔۔؟ رانا ثناء اللہ نے تحریک انصاف کو ماضی یاد دلا دیا

فون ٹیپنگ کے معاملے میں عمران خان کیا کہتے تھے ۔۔؟ رانا ثناء اللہ نے تحریک ...
 فون ٹیپنگ کے معاملے میں عمران خان کیا کہتے تھے ۔۔؟ رانا ثناء اللہ نے تحریک انصاف کو ماضی یاد دلا دیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد  (مانیٹرنگ ڈیسک) مشیر وزیراعظم برائے سیاسی امور رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ فون ٹیپنگ کے معاملے میں عمران خان بھی تو یہی کہتے تھے کہ ایسا ہونا چاہیے پھر آج کیسے پی ٹی آئی والے اس کو غلط کہہ رہے ہیں،میری نظر میں تو بہتر یہ ہے کہ یہ سب کچھ لیگل کور میں ہو اور جو کرے پھر وہ اس کی ذمہ داری بھی قبول کرے.ملک کو بحرانوں سے نکالنے کے لیے ہم نے ٹارگٹ مقرر کردیئے ہیں جن کو ہم ہر قیمت پر پورا کرکے ملک کو بحرانوں سے نکالیں گے۔

 انہوں نے ان خیالات کا اظہار نجی ٹی وی کے پروگرام ’’کیپٹل ٹاک‘‘میں میزبان حامد میر سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔

مشیر وزیراعظم برائے سیاسی امور رانا ثنا اللہ نے کہا کہ وزیراعظم نے اپنی تقریر میں بالکل کابینہ کے ارکان کو تنبیہہ کی ہے کہ وہ اپنی وزارت پر توجہ دیں تساہلی نہ برتیں کیونکہ ملک کو بحرانوں سے نکالنے کے لئے ہم نے ٹارگٹ مقرر کردیئے ہیں جن کو ہم ہر قیمت پر پورا کرکے ملک کو بحرانوں سے نکالیں گے وزیراعظم اپنی کابینہ سے مطمئن ہیں تاہم ان کو اپنی تقریر میں یہ کہنا تھا کہ وہ عوام کے مسائل پر کسی قسم کی بھی وزراء کی تساہلی کو برداشت نہیں کریں گے ۔

مشیر سیاسی امور رانا ثناء اللہ کا کہنا تھا کہ فون ٹیپنگ کی جو اجازت دی گئی ہے اس میں یہی لکھا گیا ہے کہ نیشنل سیکیورٹی کے تحفظ کے لیے کوئی بھی ادارہ جو ہے وہ گفتگو کو سن سکتا ہے ،عمران خان بھی تو یہی کہتے تھے کہ ایسا ہونا چاہیے پھر آج کیسے پی ٹی آئی والے اس کو غلط کہہ رہے ہیں ۔ 

اس بارے میں میری ذاتی رائے یہ ہے کہ بجائے اس کے کہ یہ چیزیں جو ہیں اگر بلااجازت ہورہی تھیں اور پھر پتہ بھی نہیں چلتا کہ کس نے یہ ٹیپ کیا جو لیک ہوگئی ہے لیکن اب اگر کوئی اس کی ٹیپ کی ذمہ داری لیتا ہے تو وہ واضح بھی کرے گا کہ اس آڈیوکو ٹیپ کرنے کا اس کا مقصد یہ تھا پھر عدالت کا کام ہے اس مقصد کو دیکھنا ۔میری نظر میں تو بہتر یہ ہے کہ یہ سب کچھ لیگل کور میں ہو اور جو کرے پھر وہ اس کی ذمہ داری بھی قبول کرے۔ اگر ریاست کو کسی پر شک ہوتا ہے کہ وہ ایسے کسی جرم کا مرتکب ہورہاہے جس سے قومی سلامتی کو خطرہ ہوسکتا ہے تو وہ اپنا اختیار استعمال کرسکتا ہے ۔