بانی پی ٹی آئی کی 9مقدمات میں عبوری ضمانتیں خارج ہونے کا تحریری فیصلہ جاری 

بانی پی ٹی آئی کی 9مقدمات میں عبوری ضمانتیں خارج ہونے کا تحریری فیصلہ جاری 
بانی پی ٹی آئی کی 9مقدمات میں عبوری ضمانتیں خارج ہونے کا تحریری فیصلہ جاری 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)انسداد دہشتگردی عدالت لاہورنے بانی پی ٹی آئی کی 9مقدمات میں عبوری ضمانتیں خارج ہونے کا تحریری فیصلہ جاری  کر دیا،اے ٹی سی جج خالد ارشد نے چار صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کیا۔

نجی ٹی وی چینل جیو نیوز کے مطابق فیصلےمیں کہا گیا ہے کہ دو سرکاری گواہوں نے بیان دیا کہ 7مئی کو شام 5بجے زمان پارک میٹنگ ہوئی،گواہوں نے بیان دیا کہ میٹنگ میں پی ٹی آئی لیڈرشپ کے 15لوگ تھے،بانی پی ٹی آئی نے 9مئی کو اسلام آباد ہائیکورٹ میں گرفتاری کا خدشہ ظاہر کیا، فیصلے میں کہا گیا ہے کہ  ہدایات دی گئیں کہ اگر بانی پی ٹی آئی گرفتار ہو تو یاسمین راشد کی قیادت میں ورکرز کو اکٹھاجائے ، فیصلہ ہوا کہ گرفتاری پر فوجی تنصیبات، سرکاری عمارتوں پر حملہ کرکے حکومت کو پریشرائز کیا جائے گا۔

عدالتی فیصلے میں مزید کہا گیا ہے کہ 9مئی کو بانی پی ٹی آئی نےویڈیو بیان دیا کہ اگر انہیں گرفتار کیا تو حالات سری لنکا جیسے ہوں گے،پراسیکیوشن نے بانی پی ٹی آئی کے ویڈیو پیغامات کا ٹرانسکرپٹ جمع کرایا،پراسیکیوشن کا کیس یہ ہے کہ بانی پی ٹی آئی نے9مئی کی منصوبہ بندی کی ، پراسیکیوشن کا کیس یہ ہے کہ پی ٹی آئی ٹاپ لیڈرشپ نے منصوبہ بندی سےاتفاق کیا، بانی پی ٹی آئی سے اشتعال انگیزی کیلئے بنائے گئے ویڈیو میں استعمال آلا ت برآمد ہونے ہیں۔

فیصلے میں مزید کہا گیا ہے کہ وکیل کا یہ کہنا کہ درخواست گزار کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے اس دلائل میں وزن نہیں،مجرمانہ سازش سے پرامن اجتماع بھی دہشتگرد بن جاتا ہے،آرمی تنصیبات، جناح ہاؤس، سرکاری عمارتوں پر حملہ دہشتگردی کے زمرے میں آتا ہے،درخواست گزار اس فعل سے اپنے قانون پر عملدرآمد کے بنیادی حقو ق کھو بیٹھا ہے،عبوری ضمانت معصوم فرد کا حق ہے، عبوری ضمانت اس درخواستگزار کا حق نہیں جس نے سازش کرکے ریاست کیخلاف جنگ کی،عبوری ضمانت اس کا حق نہیں جس نے حکومت کا تختہ الٹنےکیلئے سازش کی،درخواستگزار کا مبینہ جرم سے تعلق ثابت کرنے کیلئے مناسب گراؤنڈ موجود ہے،بانی پی ٹی آئی کی عبوری ضمانتیں خارج کی جاتی ہیں۔