ملکی معیشت کا سب سے بڑا زخم پاور سیکٹر کے لاسز ہیں،کراچی میں ایک سے زائد کمپنیوں کو بجلی کی ڈسٹری بیوشن دی جائے: مصطفیٰ کمال

ملکی معیشت کا سب سے بڑا زخم پاور سیکٹر کے لاسز ہیں،کراچی میں ایک سے زائد ...
ملکی معیشت کا سب سے بڑا زخم پاور سیکٹر کے لاسز ہیں،کراچی میں ایک سے زائد کمپنیوں کو بجلی کی ڈسٹری بیوشن دی جائے: مصطفیٰ کمال

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن )یم کیو ایم کے سینئر رہنما مصطفیٰ کمال نے کہا ہے کہ کے الیکٹرک کے حوالے سے پرائیویٹائزیشن کو ٹھیک کرنا ہوگا اور ایک سے زائد کمپنیوں کو بجلی کی ڈسٹری بیوشن دینے کی ضرورت ہے۔
کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مصطفیٰ کمال نے کہا کہ ہنی مون ٹائم ختم ہوگیا ہے اب ملک کی سالمیت کا مسئلہ ہے، روس بھی معاشی بحران کی وجہ سے ٹکڑے ٹکڑے ہوگیا، آج ہمیں اچھے فیصلوں اور درست سمت کی ضرورت ہے۔ایم کیو ایم بجلی کے بحران پر اپنا مؤقف سامنے رکھنا چاہتی ہے، اس سال پاور سیکٹر کے لاسز 600 ارب روپے ہیں، ہمیں پاور کمپنیوں کو 1700 ارب روپے دینے ہیں جبکہ ملک کی ڈویلپمنٹ کےلیے بجٹ میں 1400 ارب روپے ہیں، پاکستان کی معیشت کا سب سے بڑا زخم پاور سیکٹر کے لاسز ہیں۔

ایم کیو ایم رہنما کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ضرورت سے زیادہ بجلی موجود ہے مگر 18،18 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ ہورہی ہے، جب زیادہ بجلی دیتے ہیں تو زیادہ لاسز ہوتے ہیں اس لئے انہوں نے سوچا کہ بجلی ہی کم کردو تاکہ لاسز کم ہوں، آپ اپنے لاسز کو بچانے کےلیے بجلی کی پیداوار کم کررہے ہیں، یہ سارے لاسز وہ ادا کررہا ہے جو بل دے رہا ہے، یہ نظام لوگوں کی برداشت سے باہر ہوگیا ہے، سفید پوش انسان بجلی کا بل دینے سے قاصر ہے۔
مصطفیٰ کمال نے مزید کہا کہ تمام ڈسکوز کو پرائیویٹائز کردینا چاہیے، کے الیکٹرک کی پرائیویٹائزیشن کا تجربہ زیادہ اچھا نہیں ہے، کے الیکٹرک کے حوالے سے پرائیویٹائزیشن کو ٹھیک کرنا ہوگا اور ایک سے زائد کمپنیوں کو بجلی کی ڈسٹری بیوشن دینے کی ضرورت ہے، دنیا بھر میں بجلی کی کمپنیوں کے حوالے سے لوگوں کے پاس آپشنز ہیں۔