ملک ریاض کیخلاف مقدمہ ، سپریم کورٹ نے چیف جسٹس کے بیٹے کی درخواست واپس کردی

ملک ریاض کیخلاف مقدمہ ، سپریم کورٹ نے چیف جسٹس کے بیٹے کی درخواست واپس کردی
ملک ریاض کیخلاف مقدمہ ، سپریم کورٹ نے چیف جسٹس کے بیٹے کی درخواست واپس کردی

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ نے چیف جسٹس کے بیٹے ارسلان افتخار چوہدری کی سیکیورٹی فراہم کرنے اوربحریہ ٹاﺅن کے مالک ملک ریاض کے خلاف اندراج مقدمہ کی درخواست اعتراض لگاکر واپس کردی ہے ۔اعتراض میں رجسٹر ار نے کہاہے کہ درخواست باضابطہ طریقہ کار کے تحت دائر نہیں کی گئی اور یہ معاملہ زیرسماعت ہے ، اِس لیے یہ قابل قبول نہیں لہٰذا یہ درخواست واپس کی جاتی ہے البتہ معاملہ کیس کی سماعت کرنے والے بنچ کے روبرو اُٹھایاجاسکتاہے ۔ارسلان افتخار کے وکیل سردار اسحاق کی جانب سے دائر درخواست میں موقف کیاگیاکہ ملک ریاض کے بیانات میں تضاد اور وہ اُنہیں مسترد کرتے ہیں ۔نجی چینل کے پروگرا م کا حوالہ دیتے ہوئے ارسلان افتخار نے کہاکہ حامد میر کے مطابق ملک ریاض کے پاس اُن کے خاندان کی خواتین کی ویڈیوز موجود ہیں جن کے تحت اُن کی کردار کشی کی جارہی ہے لہٰذا عدالت ملک ریاض کے خلاف کریمینل کیس کا حکم دے ۔اُنہوں نے سیکیورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے موقف اختیارکیاکہ سابق گورنر پنجاب کے قتل کے بعد اُن کے بیٹے کو دن دیہاڑے اغواءکرلیاگیا، سابق جنرل کے داماد کو لاہور سے اغواءکرلیاگیااوراُن کے والد نے بھی اُنہیں گھر سے نکال دیاہے جبکہ اُن کی پہچان بھی بن چکی ہے لہٰذا عدالت اُنہیں ملکی صورتحال کے پیش نظر سیکیورٹی فراہم کرنے کے احکامات جاری کرے۔اُنہوں نے کہاکہ عدالت ملک ریاض کے پیش نہ ہونے پر رجسٹرار کی موجودگی میں بحریہ ٹاﺅن کے تمام دفاتر سیل کرکے ریکارڈ حاصل کرنے کے احکامات جاری کرے ۔ارسلان افتخار نے کہاکہ معاملہ عدالت میں ہے ، ملک ریاض کو روکاجائے کہ وہ مواد انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا پرنہ لائیں او ر معاملے کی سنجیدگی کو دیکھتے ہوئے عدالت مکمل تحقیقات کرائے ۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں /Breaking News