امن وامان کی صورتحال ، کرکٹ کے بعد ہاکی کو بھی شدید دھچکا

امن وامان کی صورتحال ، کرکٹ کے بعد ہاکی کو بھی شدید دھچکا

  

دی ہیگ( نیٹ نیوز) کراچی ائیرپورٹ پر دہشت گردوں کے حملوں کے بعد پاکستان میں انٹرنیشنل ہاکی مقابلوں کی بحالی کو ایک بار پھر شدید دھچکا لگا ہے اور پاکستان ہاکی فیڈریشن کے صدر اختر رسول اور سیکریٹری رانا مجاہد جو ہالینڈ میں غیر ملکی ٹیموں اور ایف آئی ایچ کو پاکستان آنے کی دعوت دے رہے تھے اب انہوںنے بھی اپنے لبوں کو سی لیا ہے اور بھارتی ہاکی ٹیم کی20 جون کو پاکستان آمد پربھی سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔ پی ایچ ایف اور ہاکی انڈیا کے درمیان معاہدہ کے تحت تین میچوں کی سیریز کے میچز کراچی‘ لاہور اور فیصل آباد میں کھیلے جانے تھے۔ ہاکی ورلڈکپ میں شریک ممالک کی ٹیم انتظامیہ اور ایف آئی ایچ کے آفیشلز میں پاکستان کے حالات زیربحث رہے۔ایف آئی ایچ ذرائع کے مطابق انٹرنیشنل ہاکی فیڈریشن کے صدر لینڈرو نیگرے جنہوں نے گزشتہ روز پاکستان میں انٹرنیشنل ہاکی مقابلوں کی بحالی کا عندیہ دیا تھا پاکستان کے موجودہ حالات کے باعث انہوں نے بھی اپنے فیصلے پر نظرثانی کرنا شروع کردی ہے جس کے بعد لگتا ہے کہ پاکستان میں انٹرنیشنل ہاکی کے مقابلوں کے انعقاد کی تمام کوششیں دم توڑ گئیں ہیں۔ حملے کے باعث پولینڈ اور ارجنٹینا نے پاکستان میں ہاکی کھیلنے کو سیکیورٹی سے مشروط قراردیدیا ہے۔ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ دی ہیگ میں ہونیوالے انٹرنیشنل ہاکی فیڈریشن کے ایگزیکٹیو بورڈ کے اجلاس میں پاکستانی پرائم منسٹر گولڈ کپ ہاکی ٹورنامنٹ اور سیکیورٹی کے معاملات کو زیربحث لایا جائیگا۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -