مسلمانوں کے تمام فرقوں کے درمیان عملی اتحاد ناگزیر ہے :میرواعظ

مسلمانوں کے تمام فرقوں کے درمیان عملی اتحاد ناگزیر ہے :میرواعظ

  

سرینگر(اے پی پی) مقبوضہ کشمیرمیں کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین میرواعظ عمر فاروق نے مسلکی منافرت کوملت اسلامیہ کیخلاف گہری سازش قراردیتے ہوئے کہاہے کہ مسلمانوں کے تمام فرقوں کے درمیان عملی اتحاد ناگزیر ہے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق میر واعظ عمر فاروق نے ان خیالات کا اظہار ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ انہوںنے کہاکہ معاشرتی اوراخلاقی زبوں حالی کا سدباب کرنے میں علماءکرام کاکرادا اہم ہے۔انہوںنے اتحادکے عملی مظاہرے کو ملت اسلامیہ کے جملہ مسائل اور مشکلات کے لئے ناگزیر قرار دیتے ہوئے علمائے کرام پر زور دیا کہ وہ مسلکوں کی ترجمانی کے بجائے اسلام کے جامع اور مکمل نظام حیات کی ترجمانی کریں اور فروعی مسائل میں الجھنے کے بجائے متحد ہو کر سماجی بے راہ روی اور اخلاقی برائیوں کے خاتمے کےلئے صف آرا ہوجائیں۔ حریت چیئرمین نے مساجد اور امام بارگاہوں کو تبلیغ دین کے ساتھ ساتھ اصلاحی تحریک کے مراکز میں تبدیل کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ امام خمینی نے مساجد سے ہی اسلامی انقلاب کی تحریک کا آغاز کیا اور عالم اسلام کے اس عظیم مفکر ، داعی دین اور مرد آہن نے 20 ویں صدی میں ایک عظیم انقلاب برپااور ایک اسلامی حکومت تشکیل دے کر اسلام کے نظام حیات کو عملی شکل میں پیش کیا۔انہوںنے کہا کہ امام خمینی نے شرق و غرب کے بجائے اسلام کی بالا دستی کا نعرہ بلند کیا اور مسلمانوںکے قبلہ اول بیت المقدس کو صیہونی تسلط سے آزاد کرانے کےلئے عالمی سطح پر یوم قدس منانے اور تمام عالم اسلام کو مسلکی حد بندیوں سے بالا تر ہو کر اسلام کی سربلندی کےلئے جدوجہد کا حوصلہ عطا کیا۔

 میر واعظ عمرفاروق نے حضرت امیر کبیر میر سیدعلی ہمدانی کو اہل کشمیر کا عظیم محسن قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان کا تعلق خود ایران سے تھا اورانہوںنے اہل کشمیر کو اسلام اور ایمان کی دولت سے سرفراز کرنے کے ساتھ ساتھ صنعت و حرفت کا لافانی تحفہ بھی دیا۔ انہوں نے کشمیر میں دستکاری کی صنعت کے فروغ اور اس قدیم اور تاریخی صنعت کو محفوظ بنانے کےلئے یہاں کے تجارت پیشہ افراد پر زور دیا کہ وہ ایمانداری اور دیانتداری کے روش کو اپنی کاروباری زندگی کا اولین اصول قرار دیں۔اس موقع پر ایم ایس شمس، شیخ غلام حسن متو اور مولانابلال احمد کشمیری نے بھی خطاب کیا ۔

مزید :

عالمی منظر -