اسرائیلی کابینہ کی فلسطینی قیدیوں کےخلاف قانون مزید سخت کرنے کی منظوری

اسرائیلی کابینہ کی فلسطینی قیدیوں کےخلاف قانون مزید سخت کرنے کی منظوری

  

مقبوضہ یروشلم (این این آئی)اسرائیلی کابینہ نے فلسطینی قیدیوں کو رعایت اور معافی ملنے کے امکان کو مکمل طور پر ختم کرنے کے لیے قانون میں ترامیم کی منظوری دیدی۔مجوزہ ترامیم کی پارلیمنٹ سے منظوری سے قانون کا باضابطہ حصہ بن جائیں گی۔ جبکہ معافی دینے یا سزاوں میں نرمی کرنے کا صدارتی اختیار بھی محدود ہو جائے گا۔اس کے مقابلے میں فلسطینیوں کے خلاف اسرائیلی عدالتوں کو وہ سارے اقدامات کرنے کا حق مل جائے گا جو اسرائیلی حکومت یا فورسز چاہتی ہیں۔اس سے پہلے عدالتوں کو یہ اختیار نہ تھاکہ وہ صدر کو کسی ایسے فلسطینی قیدی کی سزا میں تخفیف سے روک سکیں جو مبینہ مقدمہ قتل میں گرفتار ہے۔ لیکن اب نئے قانون کی منظوری سے عدالتیں صدر کو ایسا کرنے سے روک سکیں گی۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق اسرائیل کی دائیں بازو کی جماعت کی رہنما آئَلیت شیکڈ نے کہاکہ قانون میں ترامیم کا فیصلہ فلسطینیوں کی رہائیاں روکنے کیلیے کی جا رہی ہیں، ان کے بقول جب سفارتی سطح کے ایک سمجھوتے کے ذریعے 78 فلسطینیوں کی رہائی ہوئی تویہ عوامی سطح پر تمسخر کا باعث بنی تھیں۔

مزید :

عالمی منظر -