جب صدارت چھوڑی تو کلنٹن کے پاس ایک پیسہ بھی نہ تھا

جب صدارت چھوڑی تو کلنٹن کے پاس ایک پیسہ بھی نہ تھا
جب صدارت چھوڑی تو کلنٹن کے پاس ایک پیسہ بھی نہ تھا
کیپشن: Clinton

  

واشنگٹن(نیوزڈیسک) کہنے کو ہمارا ملک اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے لیکن بدقسمتی سے ہمارے رہنما جب اقتدار کے ایوانوں میں داخل ہوں تو اربوں لوٹ کر ہی رخصت ہوتے ہیں اور دوسری طرف سیکولر مغربی ممالک جنہیں ہم دن رات تنقید کا نشانہ بناتے ہیں۔حلال کی روزی کمانے والے رہنماؤں سے بھرے پڑے ہیں۔امریکہ کے طاقتور صدر بل کلنٹن کی طاقتور اہلیہ اور سابقہ امریکی وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن نے ایک تازہ انٹرویو میں انکشاف کیا ہے کہ جب صدر کلنٹن کا دورہ اقتدار ختم ہوا تو دونوں میاں بیوی قرضوں کے بوجھ تلے دبے ہوئے تھے اور اُنہیں گزراوقت کرنے کیلئے خون پسینہ ایک کرنا پڑاامریکی ٹی وی اے بی سی کو دیے گئے ایک انٹرویو میں ہلری نے بتایا کہ جب وہ وائٹ ہاؤس سے نکلے تو نہ صرف خالی ہاتھ تھے بلکہ قرضوں کا پہاڑ سر پر تھااور اپنے گھر اور بیٹی چیلسی کی تعلیم کیلئے انہیں تنکا تنکا اکٹھا کرنا پڑا سابق امریکی خاتون اول کا کہنا تھا کہ یہ اُن کیلئے بہت ہی مشکل اور تنگ دستی کا دور تھا۔لیکن ان کا کہنا ہے کہ آنے والے سالوں میں اُنہوں نے ملکر شدید محنت کی اور خصوصاً بل کلنٹن نے دن رات ایک کرکے اتنی رقم کمائی کہ اُنہوں نے اپنے قرضے بھی اتار دئیے اور ذاتی گھر کے مالک بھی بن گئے اور اب ایک آسودہ زندگی گزار رہے ہیں ۔ واضع رہے کہ یہ آپ بیتی دنیا کے سب سے طاقتور اور امیر ترین ملک کے حکمران جوڑے کی ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -