پنجاب حکومت کا بجٹ بھی آئی ایم ایف کی ہدایات کے مطابق تیار کیا گیا ،اور نگزیب برکی

پنجاب حکومت کا بجٹ بھی آئی ایم ایف کی ہدایات کے مطابق تیار کیا گیا ،اور نگزیب ...

لاہور(سپیشل رپورٹر )پاکستان پیپلز پارٹی کے راہنماوں نے تیرہ جون کو پنجاب حکومت کا پیش کیا جانے والا صوبائی بجٹ بھی آئی ایم ایف کی ہدایات کے مطابق وفاقی حکومت کے پیش کیے جانے والے بجٹ کی طرزپر تیار کیا گیا ہے جس سے کسی قسم کے ریلیف کی تو قع رکھنا بے وقوفی کے مترادف ہو گا یہ بات پاکستان پیپلز پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے رکن و صوبائی سیکرٹری فنانس اور نگزیب برکی ،ڈپٹی جنرل سیکرٹری پنجاب افنان صادق بٹ اور پیپلز لیبر بیورو پنجاب کے ترجمان وصوبائی سیکرٹری اطلاعات پنجاب محمد سلیم مغل نے میڈیا آفس سے جاری اپنے مشترکہ بیان میں کہی کہ وفاقی بجٹ مجموعی طور پر الفاظ کا گورکھ دھندہ تھا جس میں بڑے بڑے میگا پرا جیکٹس شروع کرنے کی دعویدار مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے بجٹ میں عوام کو ریلیف دینے کی بجائے صرف اتفاق فونڈری کو فائدہ دینے کے لیے قیمتوںمیں اضافہ کیا ،انہوں نے الزام عائد کیا ہے کہ روشن پاکستان کے سفر کا آغاز کرنے کی دعویدار مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے پاکستان بونڈ اور یورو بونڈ کے نام پر انتہائی مہنگے قرضے لیے دو ارب ڈالر بیرون ملک سے لے کر نو ماہ کے اندر اندر چار ہزار روپے فی قرضہ مزید پاکستا نی پر چڑھا کر آنے والی نسلوں کو بھی مقروض کر دیا ہے ،یہ سود کی اتنی بڑی رقم ہے جسے لے کر آج تک کوئی بھی ملک نہیں اتا ر سکا ہے ،جس پر حکومت قوم کو بتائے اس کے پیچھے کیا عوامل کار فرماتھے جو اتنے بھاری قرضے لیے گئے ،انہوں نے کہا کہ بجلی کا ملک میں وجود نہیں اس پر بجلی کی قیمتوں میں مزید اضافہ عوام کو مزید مشکل میں ڈال دے گا ،بجٹ میں سرمایہ داروں اور ایکسپوٹر پر ڈیوٹی ڈرابیک لگانے سے کرپشن کے مزید باب کھلیں گے ،جبکہ بنیادی تعلیم میں بہتری اور اصلاحات کا ذکر تک نہیں کیا گیا ہے،پاکستان ایک زرعی ملک ہے اور زرعی شعبے اور کسانوں کے لیے کوئی اقدام نہیں اٹھایا گیا جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ حکومت نے ستر فیصد دیہات سے وابستہ لوگوں کو دیوار کے ساتھ لگا دیا ہے ،انہوں نے کہا کہ بجٹ میں سرمایہ داروں کو ریلیف دینے سے پتہ چلتا ہے کہ حکومت میں بھی تا جر اور سرمایہ دار بیٹھے ہیں جن کا صرف ایک ہی ایجنڈا ہے کے ایک کا دس اور دس کا سو ملے ،انہوں نے مزید کہاکہ ملک بھر کے پچیس لاکھ سے زائد غریب اور بے وسیلہ سرکاری ملازمین مہنگائی کی چکی میں بری طرح پس رہے ہیں جن کی تنخواہوں میں آٹے میں نمک کے برابر محض دس فیصد اضافہ کر کے مسلم لیگ (ن)کی لیڈر شپ نے اس تاثر پر مہر تصدیق ثبت کر دی ہے کہ وہ سرکاری ملازمین سے کسی قسم کی ہمدردی نہیں رکھتی یہی وجہ ہے کہ آج عوام نے پیپلز پارٹی کے دور حکومت کو یاد کرنا شروع کردیا ہے ،جس نے اپنے پانچ سالہ دور حکومت میں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب سے ایک سو ستاون ،فیصد اضافہ کر کے ان کے معاشی مسائل کو کم کر کے مزدور دوست ہونے کا حق اور ثبوت دیا ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1